سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(34)حديث :’’ أنا من نور الله ،، و حديث : ,, لولاك لما خلقت الأفلاك ،، صحیح ہے یا ضعیف ؟

  • 15876
  • تاریخ اشاعت : 2016-05-05
  • مشاہدات : 1605

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

حديث :’’ أنا من نورالله ،، وحديث : ,, لولاك لما خلقت الأفلاك ،، صحیح ہےیاضعیف ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

دونوں حدیثیں بےاصل ہیں۔ پہلی حدیث کی بابت حافظ ابن حجر فرماتے ہیں’’ لا اعرفہ،، تذکرۃالموضوعات ص 84 اس حدیث کےموضوع ہونے کی ایک وجہ یہ بھی ہےکہ آں حضرت ﷺ کےنور خدا سے پیدا ہونے کااگر یہ  معنی ہےکہ آپ ﷺ کانور ، اللہ کےنور کاعین وکل ہے،توآں حضرت ﷺ کاخدا ہونالازم آئے گا۔اوراگر یہ مطلب ہےکہ نور ،خدا کےنور کاجزوہے،تو خدا کی تجزی اورانقسام لازم آئے گااور اگر یہ مطلب ہےکہ اللہ کانو ر،آں حضرت ﷺ کےنورکاخالق ہے۔تویہ بھی غلط ہے،کیوں کہ آپ ﷺ کی پیدائش نورسے نہیں ہے بلکہ مٹی سےہے،اور سب کومعلوم ہےفرشتے نورسےپیدا کئے گئے ہیں ۔اور آں حضرت ﷺ کےفرشتہ ہونے کی نفی خود قرآن میں موجود ہے:’’ ولا اقول انی ملک ،(الانعام : 5) اور ہرشخص یہ بھی جانتا ہےکہ آپ ﷺ حضرت آدم علیہ السلام کی اولاد سےہیں اور آدم علیہ السلام کی تخلیق مٹی سےہوئی ہے۔پس آں حضرت ﷺ کےنورکے بجائے مٹی سےپیدا ہونے میں کوئی شبہ نہیں رہا ۔حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سےمرفوعا مروی ہے:’’خلقت الملئكة من نور ،وخلق الجان من نار ،و خلق آدم مما وصف لكه ،، (مسلم : 2996، 4/294).

دوسری حدیث کےمتعلق   علامہ صنعانی فرماتے ہیں:’’موضوع ،، (تذکرۃالموضوعات ص: 86 ، الفوائد المجموعۃ للشوکانی : ص  182 ، الموضوعات الکبیر للقاری الحنفی ص: 59 ) اورتقریبا اسی مضمون کی دیلمی اور ابن عساکر نے بالترتیب یوں روایت کیاہے :’’ عن ابن عباس موفوعا : أتاني جبريل ، فقال : يا محمد ! لولا ك لما خلقت الجنة ولولا ك ما خلقت النار ،،وفي رواية ابن عساكر : لولاك ماخلقت الدنيا ،، مگر مسند الفردوس  دیلمی کی اور ابن عساکر نے سروپا روایات سے پرَُ ہیں اس لیے ان پراعتماد نہیں کیا جاسکتا ۔٭(علامہ محمدناصرالدین البانی سلسلۃالاحادیث الضعیفۃ ( 1،282؍299۔300 ) میں فرماتے ہیں.

وأما قول الشيخ القاري ( 67-68) لكن معناه صحيح ، فقد روي الديلمي -------
فأقول : الجزم بصحة معناه ، لا يليق إلا بعد ثبوت مانقله عن الديلمي ،وهذا ممالم أرأحداتعرض لبيانه ، وأنا وإن كنت لم أقف علي سنده ، فإني لا اترددفي ضعفه، وحسبنافي الدليل علي ذلك تفردالديلمي به،وأما رواية ابن عساكر ،فقد اخرجها ابن الجوزي ايضا في حديث طويل عن سلمان مرفوعا ، وقال : إنه موضوع ، وأقره السيوطي في اللائي ( 1/272) ثم وجدته من حديث أنس وسوف نتكلم عليه ،،ان شاء لله ,)
  (محدث دہلی ج : 9ش: 7شوال  1336 ؍ نومبر 1941ء )
ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ شیخ الحدیث مبارکپوری

جلد نمبر 1

صفحہ نمبر 103

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ