سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(464) کیا ابراہیم علیہ السلام کے والد کافر نہیں تھے ؟

  • 1268
  • تاریخ اشاعت : 2012-06-13
  • مشاہدات : 1328

سوال

 
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
ابراہیم علیہ السلام کے والد کے بارے میں کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ وہ کافر نہیں تھے۔ اور دلیل میں یہ لوگ ابراہیم علیہ السلام کی وہ دعا پیش کرتے ہیں جو نماز میں عموما” پڑھی جاتی ہے۔ یعنی "ربِ جعلنی۔ ۔" اس میں ابراہیم علیہ السلام نے اپنے والدین کے لیے مغفرت کی دعا کی ہے ۔ازراہ کرم قرآن وسنت کی روشنی میں اس حقیقت سے آگاہ فرمائیں۔جزاکم اللہ خیرا
 

 

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ابراہیم علیہ السلام کے والد کے بارے میں کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ وہ کافر نہیں تھے۔ اور دلیل میں یہ لوگ ابراہیم علیہ السلام کی وہ دعا پیش کرتے ہیں جو نماز میں عموما” پڑھی جاتی ہے۔ یعنی "ربِ جعلنی۔ ۔" اس میں ابراہیم علیہ السلام نے اپنے والدین کے لیے مغفرت کی دعا کی ہے ۔ازراہ کرم قرآن وسنت کی روشنی میں اس حقیقت سے آگاہ فرمائیں۔جزاکم اللہ خیرا

 


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

حضرت ابراہیم کے والد کا نام آزر تھا جو آخر وقت تک کفر پر رہے اور حضرت ابراہیم﷤  کی دعوت کو قبول نہ کیا۔حضرت ابوہریرہؓ سے روایت ہے کہ نبیﷺ نے فرمایا:

" یلقی ابراہیم أباہ آزر یوم القیامة و علی وجہ آزر قترة غبرة فیقول لہ ابراہیم: ألم أقل لک لا تعصنی؟"  (صحیح بخاری:3350)

’’ابراہیم ؑ قیامت کے دن اپنے باپ آزر سے ملاقات کریں گے اور آزر کےچہرے پر کالک اور گردوغبار چھایا ہوگا اسے ابراہیم ؑ کہیں گے: کیا میں نے تجھے یہ نہیں کہا تھا کہ میری نافرمانی نہ کرو؟‘‘

اس حدیث سے معلوم ہوا حضرت ابراہیم ؑ کے والد جہنم میں ہوں گے۔باقی رہا ابراہیمؑ کی اپنے باپ کے لئے دعا کا مسئلہ تو سورہ مریم میں ہے۔ جب آزر نے ان کی دعوت کے جواب میں انہیں رجم کرنے کی دھمکی دے دی تو آپؑ نے کہا:

﴿قال سلام علیک سأستغغر لک ربی إنہ کان بی حفيا ﴾ (مریم :46)

’’ فرمایا:تم پر سلامتی ہو میں اپنے پروردگار سے تمہاری بخشش کی دعا کرتا رہوں گا۔‘‘

اور پھر حضرت ابراہیم ؑ نے ان کی بخشش کی دعا کردی جو سورہ ابراہیم میں ہے:

"رَ‌بَّنَا اغْفِرْ‌ لِي وَلِوَالِدَيَّ وَلِلْمُؤْمِنِينَ يَوْمَ يَقُومُ الْحِسَابُ" (سورۃ ابراہیم:14)

’’اے میرے رب میرے والدین کو اور مومنوں کو قیامت کے دن بخش دینا‘‘

گویا یہ ابراہیم ؑ کا اپنے باپ سے کیا ہوا وعدہ پورا ہوگیا تھا۔اب سورہ توبہ میں ا س بخشش کی حقیقت اس طرح بیان ہوئی ہے۔

" وَمَا كَانَ اسْتِغْفَارُ‌ إِبْرَ‌اهِيمَ لِأَبِيهِ إِلَّا عَن مَّوْعِدَةٍ وَعَدَهَا إِيَّاهُ فَلَمَّا تَبَيَّنَ لَهُ أَنَّهُ عَدُوٌّ لِّلَّـهِ تَبَرَّ‌أَ مِنْهُ ۚ إِنَّ إِبْرَ‌اهِيمَ لَأَوَّاهٌ حَلِيمٌ" (التوبہ:114)

’’اور ابراہیم کا اپنے باپ کے لیے دعائے مغفرت مانگنا وہ صرف وعدہ کے سبب سے تھا جو انہوں نے اس سے وعدہ کرلیاتھا پھر جب ان پر یہ بات ظاہر ہوگئی کہ وہ اللہ کا دشمن ہے تو وہ اس سے محض بے تعلق ہوگئے۔‘‘

مذکورہ بالا آیات کی روشنی میں دیکھا جائے تو اس دعا کی حقیقت واضح ہوجاتی ہے۔

وبالله التوفيق

فتاویٰ ارکان اسلام

حج کے مسائل  

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ