سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(115)ٰ اجنبی عورت کے ساتھ خلوت حرام ہے

  • 9555
  • تاریخ اشاعت : 2014-01-21
  • مشاہدات : 942

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

بعض لوگ اجنبی عورتوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے تساہل سے کام لیتے ہیں مثلاً اگر کوئی شخص اپنے کسی دوست کے پاس جائے اور وہ گھر میں موجود نہ ہو تو اس کی بیوی اپنے خاوند کے اس دوست سے گفتگو کرنا شروع کر دیتی ہے، ڈرائنگ روم کا دروازہ کھول دیتی ہے اور اس کے سامنے قہوہ یا چائے پیش کرتی ہے تو کیا یہ جائز ہے؟ یاد رہے اس وقت بیوی کے سوا گھر میں اور کوئی موجود بھی نہیں ہوتا؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

کسی بھی عورت کے لئے یہ جائز نہیں کہ وہ خاوند کی عدم موجودگی میں کسی اجنبی کو اپنے گھر میں داخل ہونے کی اجازت دے خواہ وہ اس کے خاوند کا قابل اعتماد دوست ہی ہو کیونکہ اس کے معنی اجنبی عورت کے ساتھ خلوت کے ہوں گے اور حدیث میں ہے:

((لا يخلون رجل بامرأة إلا كان ثالثهما الشيطان )) جامع الترمذي)

 ’’ کوئی مرد کسی عورت کے ساتھ خلوت اختیار نہیں کرتا مگر ان میں تیسرا شیطان ہوتا ہے۔‘‘

کسی مرد کے لئے بھی یہ حرام ہے کہ اپنے دوست کی بیوی سے یہ مطالبہ کرے کہ وہ اس کے لئے دروازہ کھولے اور اس کی خدمت کرے خواہ اسے اپنی امانت و دیانت پر کتنا ہی اعتماد کیوں نہ ہو کیونکہ اس بات کا بہر حال خطرہ موجود ہوتا ہے کہ شیطان دونوں کے دلوں میں کوئی وسوسہ ڈال دے۔

خاوند پر بھی یہ واجب ہے کہ وہ اپنی بیوی کو منع کرے کہ وہ کسی بھی اجنبی کو گھر میں داخل نہ ہونے دے خواہ وہ اس کا قریبی رشتہ دار ہی کیوں نہ ہوں کیونکہ نبی اکرمﷺ  نے فرمایا ہے:

((إياكم والدخول على النساء فقال رجل من الأنصار يا رسول الله ، أفرأيت الحمو؟ قال: الحمو الموت )) صحيح البخاري)

 ’’ عورتوں کے پاس جانے سے اپنے آپ کو بچائو۔ صحابہ نے عرض کیا: یا رسول اللہﷺ دیور کے بارے میں آپ کا کیا ارشاد ہے؟ فرمایا: دیور تو موت ہے۔‘‘

’’حمو‘‘ خاوند کے بھائی یا اس کے رشتے دار کو کہتے ہیں لہٰذا اس کے علاوہ کسی دوسرے کے لئے تو بطریق اولیٰ احتیاط کی ضرورت ہے۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج3ص93

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ