سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(07) ممنوع وقت میں تحیۃ المسجد پڑھنا

  • 8546
  • تاریخ اشاعت : 2013-12-16
  • مشاہدات : 514

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
جب آدمی ممنوع وقت میں مسجد میں داخل ہو تو تحیۃ المسجد پڑھے یا نہ پڑھے؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

جب آدمی ممنوع وقت میں مسجد میں داخل ہو تو تحیۃ المسجد پڑھے یا نہ پڑھے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

علماء کے صحیح قول کے مطابق اس کے لیے افضل یہی ہے کہ اس وقت بھی تحیۃ المسجد پڑھے کیونکہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے اس فرمان کے عموم سے یہی معلوم ہوتا ہے:

(اذا رجل احدكم المسجد فلا يجلس حتي يصلي ركعتين) (صحيح البخاري‘التهجد‘ باب ما جاء في التطوع مثنيٰ مثنيٰ‘ ح:1163 وصحيح مسلم‘ صلاة المسافرين‘ باب اس تحباب تحيةالمسجد...الخ‘ح:714)

"جب تم میں سے کوئی مسجد میں داخل ہو تو اس وقت تک نہ بیٹھے جب تک دو رکعتیں نہ پڑھ لے۔"

اور اگر کوئی شخص بیٹھ جائے اور نماز نہ پڑھے تو پھر بھی کوئی حرج نہیں۔

هذا ما عندي والله اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

      ج  2 

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ