سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(227) مو نچھوں کو منڈوانا

  • 8521
  • تاریخ اشاعت : 2024-05-21
  • مشاہدات : 1430

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

امید ہے کہ آپ کچھ  ایسی احا دیث  کی طر ف  راہنما ئی فر ما ئیں گے  جن سے معلوم ہو کہ رسول اللہ ﷺ نے فر ما یا ہے کہ "جو شخص داڑھی منڈائے  وہ  فا سق   ہے " نیز یہ فر ما یئے کہ کیا یہ جا ئز ہے  کہ مونچھوں کو با لکل  منڈوا دیا جا ئے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

داڑھی  منڈانا  حرا م  ہے  اور  منڈانے وا لا  فا سق   ہے کیو نکہ  وہ  ان  احا دیث  کی مخا لفت  کر تا  ہے   جن  میں  داڑھی   بڑھا نے کا حکم  دیا  گیا ہے اس سے  پہلے  بھی بحوث  العلمیہ  والا فتا ء  کی مستقل کمیٹی  نے  اس سے  ملتے جلتے  ایک سوال  کے جواب  میں فتوی  دیا تھا  جو کہ حسب  ذیل ہے :

" داڑھی  منڈ ا نا  حرا م  ہے  کیو نکہ  حضرت  ابن عمررضی اللہ تعالیٰ عنہ  سے مروی  یہ حدیث ہے کہ رسول  اللہ ﷺ نے فر ما یا :

خالفوا المشركين ووفروا اللحي واحفوا الشوارب (صحيح بخاری)

"مشرکو ں کی مخا لفت کرو  داڑھیوں  کو  بڑھا  ئو  اور  مونچھوں  کو کترا ئو ۔" اور حضرت  ابو ہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ   سے مروی  یہ حدیث ہے  کہ نبی  کر یم ﷺ  نے فر ما یا :

جزوا الشوارب وارخوا اللحي وخالفوا المجوس (صحيح مسلم)

"مو نچھوں  کو  کترا ئو  داڑھیوں  کو بڑھائو  اور  مجو  سیوں  کی مخا لفت  کرو ۔ داڑھی  منڈانے پر اصرار  کر نا کبیرہ گناہ ہے  جو منڈائے   اسے  نصیحت  کر نا  اور داڑھی  منڈانے  سے منع  کرنا  واجب  ہے ۔  اگر ایسا  کو ئی شخص  قیادت  یا کسی دینی  مرکز  میں  ہو تو  اسے  اور بھی زیا دہ تا کید  کے سا تھ  سمجھا نا  ضروری ہے ۔مو نچھوں کو منڈوانا  رسول اللہ ﷺ یا کسی  بھی صحا بی  سے ثابت  نہیں ہے  اس  سلسلہ  میں جو ثا بت  ہے وہ  کترا نا  اور  تر شوا نا ہے ۔

هذا ما عندي والله اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج1 ص38

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ