سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(155) اہل و عیا ل کے سا تھ سکو نت کا حکم جب کہ وہ نماز نہ پڑھتے ہوں

  • 8445
  • تاریخ اشاعت : 2013-12-15
  • مشاہدات : 512

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
جب آدمی  اپنے  اہل و عیال کو نما ز  کا  حکم دے  لیکن  وہ اس کی بات  نہ سنیں  تو کیا  وہ  ان کے سا تھ سکو نت  اختیا ر  کر ے اور مل جل کر  رہے   یا گھر  سے نکل جا ئے ؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

جب آدمی  اپنے  اہل و عیال کو نما ز  کا  حکم دے  لیکن  وہ اس کی بات  نہ سنیں  تو کیا  وہ  ان کے سا تھ سکو نت  اختیا ر  کر ے اور مل جل کر  رہے   یا گھر  سے نکل جا ئے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اگر یہ اہل وعیا ل با لکل نما ز نہ پڑ ھیں تو وہ کا فر ہیں ،دائرہ اسلام سے خا رج ہیں  ان کے سا  تھ سکو نت  اختیا ر کر نا  جا ئز نہیں  اس آدمی  پر  واجب ہے کہ وہ  انہیں  دعوت دیتا رہے  الحا ح  وزاری کے سا تھ اور بار بار  دعوت  دیتا  رہے   شا ید  اللہ تعالیٰ ٰ  انہیں  ہدا یت فر ما دے  تارک نما ز کا فر ہے ۔ والعیاذ باللہ  ؛کتا ب وسنت  کے  کے دلا ئل  اقوا ل   صحا بہ  اور صحیح  نقطہ  نظر  کے  یہی  با ت  صحیح  ہے  کہ تا رک  نما ز  کا فر ہے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج1 ص38

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ