سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(264) اپنی طرف سے وقت اور تعداد مقرر کرنا

  • 8234
  • تاریخ اشاعت : 2024-04-20
  • مشاہدات : 889

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

   گزارش ے کہ مجھے اس باتے میں فتوی دین کہ میں عشاء کی نماز کے بعد وتر پڑھ کر سورۃ الفاتحہ بار بار پڑھتا ہوا وار اس میں کسی تعداد کا تعین نہیں کرتا ۔ مثلا سو بار ہوجائے یا زیادہ تعداد مقرر رکتا ہوں وقت متعین کرتاہوں واضح کریں کہ میں قرآن کریم ہمیشہ اس نیت سے پڑھتا ہوں کہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے زیادہ اجرو ثواب حاصل ہو،کیا میرا یہ عمل بدعت قراردیاجائے گا؟  میں فاتحہ پڑھنے کے بعد توبہ استغفار کر تاہوں، اللہ تعالیٰ سے ہدایت اور بخشش کی دعاکرتاہوں ۔ اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ آپ کو اسلام اور مسلمانوں کی خدمت کی توفیق بخشے۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

قرآن مجید اللہ تعالیٰ کا کلافم ہے اور اللہ تعالیٰ کا کلام بندوں کے کلام سے اس طرح افضل ہے جس طرح خود اللہ تعالیٰ کی ذات بندوں سے افضل ہے ۔ تلاوت قرآن مجید کی فضیلت اتنی زیادہ ہے کہ اس کی صحیح مقدار اللہ تعالیٰ ہی جانتے ہیں لیکن تلاوت کرنے والے کوایسا نہیں کرنا چاہے کہ کسی خاص مقصد کے لیے کوئی سورت یا آیت تلاوت کے لیے خاص کرلی۔ مگر جو چیزیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم  نے خاص کردی ہیں ان پر عمل کرتے ہوئے اس تخصیص کا لحاظ چاہئے۔ مثلا دم جھاڑ کے لیے سورت الفاتحہ ، یانماز کی ہر رکعت میں سورت الفاتحہ پڑھنا ، سوتے وقت اس نیت سے آیت الکرسی پڑھنا کہ اللہ تعالیٰ اس (پڑھنے والے کو) شیطان سے محفوظ رکھے ، یا دم کرنے کے لیے سورت ’’ قل ہو اللہ احدo قل أعوذ برب الفلقo اور قل أعوذ برب الناس پڑھنا۔

اسی طرح کسی سورت یاآیت کو متعین تعداد میں دہرانا بھی درست نہیں الایہ کہ وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم  سے ثابت ہو ۔ کیونکہ یہ عبادت ہے اور عبادت میں شریعت کی طرف سے تعین کا خیال رکھنا چاہے۔

اس سے واض ہوتا ہے کہ رات کو وتر کے بعد بار بار پڑھنے کے لیے سورت الفاتحہ کی تخصیص بدعت ہے، اگرچہ تعداد کا تعین نہ کرے۔ کیونکہ یہ عمل نبی صلی اللہ علیہ وسلم  سے ثابت ہے نہ خلفائے راشدین میں سے ثابت ہے ۔ اس لیے بہتریہ ہے کہ فاتحہ کی یاوتر کے بعد پڑھنے کی تعین کے بغیر تلاوت کی جائے ۔ بلکہ مشروع توصر ف قرآن کریم کی بکثرت تلاوت کرنا ہے  خواہ وہ سورۂ  فاتحہ ہو یا کوئی اور مقام اسے کسی معین تعداد  و وقت کے بغیر پڑھنا جائز ہے اور اس کے شریعت سے کوئی چیز ثابت ہوجائے تو درست ہے جیسے کہ پہلے وضاحت ہوچکی ۔

وَبِاللّٰہِ التَّوفَیقُ وَصَلَّی اللّٰہُ عَلٰی نَبِیَّنَا مُحَمَّدٍ وَآلِهِ وَصَحبِهِ وَسَلَّمَ

 اللجنۃ الدائمۃ ، رکن : عبداللہ بن قعود، عبداللہ بن غدیان ، نائب صدر : عبدالرزاق عفیفی، صدر : عبدالعزیز بن باز۔

ھذا ما عندي والله أعلم بالصواب

فتاویٰ ابن بازرحمہ اللہ

جلددوم -صفحہ 303

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ