سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(367) یہ شیخ عبدالقادر جیلانی رحمتہ الله علیہ کی طرف سراسر جھوٹ منسوب ہے

  • 8187
  • تاریخ اشاعت : 2013-11-13
  • مشاہدات : 704

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

سائل قادریہ فر قہ کے متعلق معلومات چاہتاہے۔ وہ کہتاہے کہ اس نے اس گروہ کی ایک کتاب پڑھی ہے جس کا نام ہے: ’’الفیوضات الربانیة فی الماثر اولأوراد القادریة‘‘ اس میں قصیدہ ہے جس میں سلسلہ قادریہ کے پیر کے دعوے اور اقوال نقل کئے گئے ہیں۔ کیا یہ باتیں صحیح ہیں یا غلط؟ سائل نے سوال کے ساتھ قصیدہ بھی ارسال کیا ہے تاکہ اس کے مضامین کے بارے میں فتویٰ دیا جائے۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد! 

سائل نے جو قصیدہ بھیجا ہے اور جس کے بارے میں معلوم کرنا چاہتاہے کہ اس میں جو کچھ بیان ہوا ہے وہ حق ہے یا باطل‘ اسے پڑھنے سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ قصیدہ بنانے والاکوئی جاہل ہے جو اپنے متعلق ایسے دعوے کرتا ہے جو سب کے سب کفر وضلالت پر مشتمل ہیں۔ وہ دعویٰ کرتا ہے کہ علماء کے تمام علوم اسی کے علم سے ماخوذ ہیں اور اسی کے علم کی شاخیں ہیں اور کہتا ہے کہ بندوں کا اخلاق وکردار اس کے فرض اور سنت قرار دئیے ہوئے اعمال کے مطابق ہونا چاہئے۔ وہ دعویٰ کرتا ہے کہ اگر رسول اللہﷺ نے اس سے وعدہ نہ لے رکھا ہوتاتو وہ جہنم کے دروازے بھی بند کرسکتا تھا۔ جو مرید اس کا فادار ہوتا ہے وہ اس کی فریاد رسی کرتا ہے اور اسے مصیبتوں سے نجات دیتا ہے‘ وہ اسے دنیا اور آخرت میں زندہ کرتا ہے۔ اسے ہر قسم کے خوف سے محفوظ رکھتا ہے اور قیامت کے دن وہ اعمال کا وزن ہوتے وقت مریدوں کے ساتھ ہوگا۔

یہ جھوٹے دعوے کوئی جاہل شخص ہی کرسکتا ہے جو اپنے مقام سے واقف نہیں۔ کیونکہ کامل علم تو صرف اللہ تعالیٰ ہی کے پاس ہے اور آخرت کے تمام معاملات اور تمام کنٹرول صرف اور صرف اللہ کے ہاتھ میں ہے۔ اس نے یہ اختیارات کسی مقرب فرشتے کو دئیے ہیں نہ کسی نبی اور رسول اللہﷺ کو او رنہ کسی ولی کو۔ اللہ تعالیٰ نے اپنی مخلوق کے اشرف ترین فرد یعنی جناب رسول اللہﷺکو حکم دیا ہے کہ امت کو اللہ کا یہ فرمان پڑھ کر سنادیں :

{قُلْ لَّآ اَمْلِکُ لِنَفْسِیْ نَفْعًا وَّ لَا ضَرًّا اِلَّا مَا شَآئَ اللّٰہُ وَ لَوْ کُنْتُ اَعْلَمُ الْغَیْبَ لَاسْتَکْثَرْتُ مِنَ الْخَیْرِ وَ مَا مَسَّنِیَ السُّوْٓئُ اِنْ اَنَا اِلَّا نَذِیْرٌ وَّ بَشِیْرٌ لِّقَوْمٍ یُّؤْمِنُوْنَ} (الأعراف۷,۱۸۸)

’’(اے پیغمبر!) فرما دیجئے میں اپنی ذات کے نفع اور نقصان کا مالک بھی نہیں ‘ مگر جو اللہ چاہے اور اگر میں غیب جانتا ہوتا تو بہت سی بھلائی حاصل کرلیتا اور مجھے کوئی تکلیف نہ چھوتی۔ میں تو صرف ڈرانے والا اور خوشخبری دینے ولا ہوں ان لوگوں کو جو ایمان لاتے ہیں۔ ‘‘

{قُلْ اِِنِّی لَا اَمْلِکُ لَکُمْ ضَرًّا وَلَا رَشَدًا ٭قُلْ اِِنِّی لَنْ یُّجِیرَنِی مِنَ اللّٰہِ اَحَدٌ وَلَنْ اَجِدَ مِنْ دُوْنِہ مُلْتَحَدًا} (الجن۷۲,۲۱۔ ۲۲)

’’(اے پیغمبر!) کہہ دیجئے! میں تم لوگوں کے لئے نقصان کا مالک ہوں نہ ہدایت کا۔ مجھے اللہ (کے غضب) سے کوئی پناہ نہیں دے گا۔ نہ اس کے سوا مجھے کوئی جائے پناہ ملے گی۔ ‘‘

وہ حضرات جو نبی ﷺ سے انتہائی گہرا تعلق رکھتے تھے‘ جن کا آپﷺ سے انتہائی رشتہ تھا‘ جوﷺ کے حسن سلوک کے سب سے زیادہ مستحق تھے‘ آنحضرت محمدﷺ نے انہیں بھی حکم دیا ہے کہ مجھ پر ایمان اور شریعت پر عمل کے ذریعے جو خود کو اللہ کے عذاب سے بچالیں ‘ آپﷺنے انہیں یہ بھی بتایا کیہ اللہ کے غضب سے بچانے کے لئے خود آپﷺ بھی ان کے کام نہیں آئیں گے۔ جناب رسول اللہﷺ نے یہ بھی بتایا کہ قیامت کے دن نوح‘ ابراہیم‘ موسیٰ اور عیسیٰ رحمتہ الله علیہ بھی نفسی نفسی پکاریں گے۔ تو سلسلہ قادریہ کا پیر یا مخلوقات میں سے کوئی اور فرد کس طرح اپنے مریدوں کو چھڑا سکتاہے؟ اور کس طرح اھنا عہد پورا کرنے والوں کی حفاظت اور فریاد ر سی کرسکتا ہے؟ اور قیامت کو اعمال تو لے جانے کے وقت ان کا ساتھ دے سکتا ہے؟ اسے کس طرح یہ اختیار حاصل ہو سکتا ہے کہ جہنم کے دروازے بند کردے؟ حقیقت یہ ہے کہ یہ واضح بہتان ہے اور رب العالمین کی شریعت کا صاف صاف انکار۔ یہ عقیدہ رکھنے والے نے غلو میں عقل وشرع کی تمام سرحدیں پار کر ڈالی ہیں۔ وہ دعویٰ کرتا ہے کہ شیخ عبدالقادر جیلانی تخلیق کائنات سے قبل نور محمدی کے ساتھ موجود تھے اور جب قاب قوسین والی ملاقات ہوئی تو عبدالقادر بھی دوستوں کی اس ملاقات میں شریک تھے۔ وہ کہتا ہے کہ آپ نوح علیہ السلام کے ساتھ کشتی میں تھے اور انہوں نے اپنی قدرت کی ہتھیلی پر طوفان کا نظارہ کیا اور وہ حضرت ابراہیم علیہ السلام کے ساتھ تھے جب انہیں آگ میں ڈالا گیا اور وہ آگ ان کی دعا ہی سے ٹھنڈی ہوئی تھی اور اسماعیل علیہ السلام کے ساتھ تھے اور اسماعیل کی جگہ قربانی کے لئے مینڈھا ان کی بہادری یا ان کے فتویٰ کی وجہ سے نازل ہوا اور جب یعقوب علیہ السلام کی نظر ختم ہوگئی تو عبدالقادر اس وقت ان کے ساتھ تھے اور ان کے لعاب دہن کی وجہ سے حضرت یعقوب علیہ السلام کی بینائی واپس آئی۔ ادریس علیہ السلام کو جنت میں انہوں نے ہی بٹھایا‘ جب موسیٰ علیہ السلام اللہ سے ہم کلامی کا شرف حاصل کرنے کے لئے گئے تھے تو شیخ عبدالقادر جیلانی رحمتہ الله علیہ بھی ان کے ساتھ تھے اور موسی علیہ السلام کا عصا ان کے عصا سے ہی بنایا گیا تھا‘ وہ گہوارے میں عیسیٰ علیہ السلام کے ساتھ تھے۔ داؤد علیہ السلام کو بہترین آواز انہوں نے دی تھی‘ بلکہ یہ (خبیث) اس سے بھی‘ برا دعویٰ کرتا ہے چنانچہ قصیدہ کے تین شعروں میں یہ دعویٰ کرتا ہے کہ عبدالقادر ہی اللہ ہیں۔ اس مفہوم کا سب سے واضح شعر یہ ہے:

أَنَا الْوَاحِدُ الْفَرْدُ الْکَبِیرُ بِذَاتِہِ                 أَنَا الْوَاصِفُ الْمَوْصُوفُ شَیْخُ الطَّرِیقَة

’’میں بذات خود واحد‘ اکیلا اور بڑا ہوں         میں تعریف کرنے والا ہوں اور میری ہی تعریف کی گئی ہے میں شیخ طریقت ہوں۔ ‘‘

تو اے فتویٰ پوچھنے والے بھائی! بری بات کا تو سننا ہی (اس کی برائی معلوم کرنے کے لئے) کافی ہوتا ہے۔ شیخ الطائفہ کی تعریف پر مبنی اس نظم میں جو بہتان‘ جھوٹ اور سرکشی بھری پڑی ہے اس کو دیکھنے کے بعد شیخ کی سیرت وتاریخ کے تفصیلی مطالعہ کی ضرورت نہیں رہتی۔ آپ کوشش کریں کہ قرآن وحدیث سے حق کو سمجھیں اور سلف صالحین یعنی صحابہ ﷺ وتابعین کرام رضی الله عنہم نے قرآن وسنت کی جو تشریح کی ہے اسی کامطالعہ کریں۔ ویسے ہمیں یقین ہے کہ شیخ عبدالقادر جیلانی رحمتہ الله علیہ جن کی طرف یہ قصیدہ منسوب کیا جاتاہے‘ ان کا اس سے اتنا ہی تعلق ہے جتنا بھیڑئیے کا یوسف علیہ السلام کے خون سے تھا۔

آپ کے نام لیوا جھوٹی باتیں بنا کر آپ کی طرف منسوب کردیتے ہیں حالانکہ وہ ایسی باتوں سے بری ہیں۔

وَبِاللّٰہِ التَّوْفِیْقُ وَصَلَّی اللّٰہُ عَلٰی نَبِیَّنَا مُحَمَّدٍ وَآلِہ وَصَحْبِہ وَسَلَّمَ

اللجنة الدائمة۔ رکن: عبداللہ بن قعود، عبداللہ بن غدیان، نائب صدر: عبدالرزاق عفیفی، صدر عبدالعزیز بن باز

فتویٰ (۳۳۲۳)

 

 

فتاوی بن باز رحمہ اللہ

جلددوم -صفحہ 230

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ