سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(04) شرک کی سنگینی

  • 7981
  • تاریخ اشاعت : 2013-11-10
  • مشاہدات : 396

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
حدیث میں وار دپانچ ارکان اسلام کو ماننے کے بعد ، کیا کوئی شرکیہ عمل انسان کو دوبارہ کافر بنادیتا ہے؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

حدیث میں وار دپانچ ارکان اسلام کو ماننے کے بعد ، کیا کوئی شرکیہ عمل انسان کو دوبارہ کافر بنادیتا ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اسلام کا مطلب یہ ہے کہ آپ اس بات کی گواوہی دیں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور محمد ﷺ اللہ کے رسول ہیں اور نماز اداکریں ، زکوٰة دیں ، رمضان کے روزے رکھیں اور استطاعت ہو تو حج کریں۔ ایمان کا مطلب یہ ہے کہ آپ اللہ پر، اس کے فرشتوں پر، اس کی کتابوں پر، اس کے رسولوں پر، قیامت پر اور اچھی بری تقدیر اللہ کی طرف سے ہونے پر ایمان رکھیں۔ احسان کا مطلب یہ ہے کہ آپ اللہ کی عبادات ایسے (اچھے طریقے) سے کریں گویا کہ آپ اللہ تعالیٰ کو دیکھ رہے ہیں۔ اگر آپ اللہ کو نہیں دیکھ سکتے تو اللہ آپ کو دیکھ ہی رہا ہے۔ اسلام میں ظاہری اعمال شامل ہیں اور ایمان باطنی (یعنی قلبی) اعمال، اور یہ دونوں آپس میں لازم وملزوم ہیں۔ ایمان کے بغیر ا سلام درست ہے نہ اسلام کے بغیر ایمان۔ نواقص اسلام یعنی مسلمان کو کافر بنادینے والے اعمال بہت زیادہ ہیں۔ ان میں سے بڑا شرک ہے مثلاً فوت شدہ بزرگوں کو پکارنا اور ان سے فریاد کرنا،بتوں ، درختوں اور ستاروں وغیرہ سے حاجت روائی چاہنا۔ جناب رسول اللہ ﷺ سے پوچھا گیا کہ سب سے بڑا گناہ کون سا ہے؟ آپ نے ارشاد فرمایا:

(أَنْ تَجْعََ للّٰہِ نِدَّا وَھُوَ خَلَقَکَ) (الحدیث: متفق علیہ)

’’کہ تو (کسی کو) اللہ کا شریک بنائے حالانکہ اللہ نے تجھے پیدا کیا ہے۔ ‘‘

یہ حدیث صحیح بخاری اور صحیح مسلم میں موجود ہے۔ اللہ تعالیٰ یا اس کے رسول ﷺ کو گالی بکنا اور دین کا مذاق اڑانا بھی اس میں داخل ہے۔ اس کے علاوہ کسی ایسی چیز کا انکار جس کا فرض ہوناہر کسی کو بدیہی طور پر معلوم ہے مثلاً نماز اور زکوة۔ یا کسی ایسے عمل کے حرام ہونے کا انکار کرنا جودین میں بدیہی طور پر حرام ہے مثلاً چوری اور بدکاری شیخ ا لاسلام محمد بن عبدالوہاب رحمتہ الله علیہ  نے اس قسم کی دس چیزیں بیان کی ہیں۔ یہ رسالہ ’’مجموعہ توحید‘‘ میں شامل ہے اور الگ بھی شائع ہوا ہے۔

مزید معلومات کیلئے فقہ کی کتابوں میں مذکور ’’مرتد کے احکام‘‘ کا باب ملاحظہ کیجئے۔

وَبِاللّٰہِ التَّوْفِیْقُ وَصَلَّی اللّٰہُ عَلٰی نَبِیَّنَا مُحَمَّدٍ وَآلِہ وَصَحْبِہ وَسَلَّمَ

اللجنة الدائمة۔ رکن: عبداللہ بن قعود، عبداللہ بن غدیان، نائب صدر: عبدالرزاق عفیفی، صدر عبدالعزیز بن باز

فتویٰ (۳۴۱۹)

 

 

فتاوی بن باز رحمہ اللہ

جلددوم -صفحہ 15

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ