سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(589) اللہ تعالیٰ کی نافرمانی کی صورت میں مخلوق کی اطاعت نہیں

  • 7954
  • تاریخ اشاعت : 2013-11-09
  • مشاہدات : 832

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

اللہ تعالیٰ کی اطاعت کرنے کی وجہ سے اگر ماں کسی کی مخالفت کرے تو اس کا کیا حکم ہے۔ جب صورت حال یہ ہو کہ ماں ایسی چیز کا مطالبہ کرتی ہے جس میں اللہ عزوجل کی نافرمانی ہوتی ہو۔ جیسے وہ زینت کی نمائش اور اکثر سفر کا مطالبہ کرے اور یہ دعویٰ کرتی ہو کہ پردہ محض خرافات ہے اور دین میں اس کی کچھ حیثیت نہیں ۔ وہ مجھ سے محفلوں میں جانے اور ایسا لباس پہننے کا مطالبہ کرتی ہے جس میں ہر وہ چیز ظاہر ہوتی ہے جس کے ظاہر کرنے کو اللہ تعالیٰ نے عورت کے لیے حرام کیا ہے اور جب مجھے پردہ کیے ہوئے دیکھتی ہے تو غصہ میں آجاتی ہے۔ (مولوۃ۔ ح۔ ع)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اس سوال کا جواب پہلے سوال کے جواب سے معلوم کیا جا سکتا ہے۔ مطلب یہ ہے کہ جس کام میں اللہ تعالیٰ کی نافرمانی ہوتی ہو، اس میں مخلوق کی اطاعت نہیں کرنا چاہیے۔ خواہ باپ ہو یا ماں ہو یا کوئی اور ہو اور نبیﷺ سے صحیح طور پر ثابت ہے کہ آپﷺ نے فرمایا:

((انَّمَا الطَّاعۃُ فی الْمعروفِ))

’’اطاعت صرف بھلے کاموں میں کرنا چاہیے۔‘‘

نیز آپﷺ نے فرمایا:

((لَا طَاعَۃَ للمخلوقِ فی معصیۃِ الخالقِ))1

! فتاوی شیخ ابن باز میں ’’للمخلوق‘‘ اسی طرح مذکور ہے لیکن اصل میں ’’لمخلوق‘‘ ہے۔ دیکھئے شرح السنہ حدیث نمبر ۴۵۵ ۱، احمد: ج۵ ص۶۶۔ (الناشر)

’’خالق کی نافرمانی کے کام میں مخلوق کی اطاعت جائز نہیں ۔‘‘

اور یہ امور جن کی طرف سائلہ کی ماں دعوت دیتی ہے، اللہ تعالیٰ کی نافرمانی کے کام ہیں ۔ لہٰذا ان میں اطاعت جائز نہیں ۔ ہم تمہاری ماں کے لیے اللہ تعالیٰ سے ہدایت اور شیطان کی اطاعت سے عافیت کی دعا کرتے ہیں ۔

 

 

فتاوی بن باز رحمہ اللہ

جلداول -صفحہ 219

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ