سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(586) میت کے گھر میں قرآن پڑھنے کا کیا حکم ہے؟

  • 7951
  • تاریخ اشاعت : 2013-11-09
  • مشاہدات : 624

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

میت کے لیے اس طرح قرآن کی قراء ت کہ ہم میت کے مقام یا اس کے گھر میں قرآن کے کچھ نسخے رکھ دیتے ہیں ۔ بعض ہمسائے اور جان پہچان والے مسلمان آتے ہیں ۔ وہ مثال کے طور پر قران کا ایک پارہ پڑھتے ہیں ۔ پھر وہ اپنے اپنے کام پر چلے جاتے ہیں اور اس پر کچھ اجرت نہیں لیتے… تو اس طرح کی قراء ت اور دعا میت کو پہنچ جاتی ہے اور کیا اسے اس کا ثواب ہوتا ہے یا نہیں ؟

میں آپ سے افادہ کی توقع رکھتا ہوں ۔ آپ کا شکریہ… یہ خیال رہے کہ میں نے سنا ہے کہ بعض علماء اسے مطلق حرام سمجھتے ہیں ۔ بعض مکروہ سمجھتے ہیں اور بعض اس کے جواز کے قائل ہیں ۔ (عبدالرحیم۔ ج۔ الریاض)

الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

ایسے اور اس سے ملتے جلتے کام کی کوئی اصل نہیں ۔ اور یہ کام نہ نبیﷺ سے اور نہ صحابہرضی الله عنھم سے منقول ہے کہ وہ مردوں کے لیے قرآن پڑھتے ہوں بلکہ نبیﷺ نے فرمایا ہے:

((مَنْ عَمِلَ عَمَلًا لیسَ عَلَیْہِ امْرُنا مِنْہُ فہُورَدٌ))

’’ جس نے کوئی ایسا کام کیا جس پر ہمارا عمل نہ ہو، وہ مردود ہے‘‘

اس حدیث کو مسلم نے اپنی صحیح میں نکالا اور بخاری نے اپنی صحیح میں تعلیقاً بیان کیا اور صحیحین میں حضرت عائشہ رضی الله عنها سے مروی ہے کہ نبیﷺ نے فرمایا:

((مَنْ أَحدثَ فی أَمرِنا مَا لیسَ مِنْہُ فہُورَدٌ))

’’ جس نے ہمارے اس امر (شریعت) میں کوئی نئی بات پیدا کی جو پہلے اس میں نے تھی ، وہ مردود ہے‘‘

اور صحیح مسلم میں جابر بن عبداللہ رضى الله عنه سے مروی ہے کہ نبیﷺ جمعہ کے دن اپنے خطبہ میں یوں فرمایا کرتے تھے:

((أَمَّا بَعْدُ فَإِنَّ خَیْرَ الْحَدِیثِ کِتَابُ اللّٰہِ وَخَیْرَ الْہَدْیِ ہَدْیُ مُحَمَّدٍ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَشَرُّ الْأُمُورِ مُحْدَثَاتُہَا وَکُلُّ بِدْعَۃٍ ضَلَالَۃٌ))

’’امابعد! بے شک بہترین حدیث اللہ کی کتاب ہے اور بہترین راہ محمدﷺ کی راہ ہے اور سب سے برے کام دین میں نئی ایجادات ہیں اور ہر بدعت گمراہی ہے۔‘‘

اور نسائی نے صحیح اسناد کے ساتھ یہ الفاظ زیادہ لکھے ہیں :

((وکُلُّ ضَلَالۃٍ فِی النَّارِ))

’’اور ہر گمراہی کی سزا جہنم ہے۔‘‘

البتہ فوت شدہ لوگوں کے لیے صدقہ کرنے اور ان کے حق میں دعا کرنے سے انہیں فائدہ ہوتا ہے اور مسلمانوں کے اجماع کے مطابق اس کا ثواب انہیں پہنچتا ہے… اور توفیق اللہ تعالیٰ ہی سے ہے اور اسی سے مدد درکار ہے۔

 

 

فتاوی بن باز رحمہ اللہ

جلداول -صفحہ 217

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ