سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(63) جس گھڑی میں تصویر ہو اسے پہنے ہوئے نماز کا حکم؟

  • 7787
  • تاریخ اشاعت : 2013-11-07
  • مشاہدات : 364

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

بعض گھڑیوں کے اندر بعض جانداروں کی تصویریں ہوتی ہیں ایسی گھڑی پہن کر نماز پڑھنا جائز ہے؟ یا اگر صلیب کی تصویر ہو تو نماز ہوگی یا نہیں؟ابراہیم ۔س۔ منطقہ۔ الجنوب


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

جب تصویر گھڑی کے اندر چھپی ہوئی ہو ، جو دیکھی نہ جاسکتی ہوتو اس میں کوئی حرج نہیں… مگر جب تصویر گھڑی کے باہر کی طرف ہویا کھولنے سے نظر آجاتی ہو تو نماز جائز نہ ہوگی جیساکہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت ہے کہ آپ نے حضرت علی رضی اللہ عنہ سے فرمایا:

((لا تدَعْ صُورۃً إلاَّ طَمَسْتَھا۔))

’’ جو تصویر بھی دیکھو اسے مٹا دینا‘‘

یہی صورت صلیب کی ہے جس گھڑی میں صلیب کی تصویر ہوگی اسے پہنے ہوئے نماز جائز نہ ہوگی ۰ الایہ کہ اسے کھرچ دیا جائے یا پینٹ وغیرہ سے مٹادیا جائے۔ جیساکہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت ہے کہ :

((أنَّہ کانَ لایرَی شیئاً فیہ تَصْلیبٌ إلاَّ نقضَہ۔ وفی لفظٍ: إلاَّ قَضَّبَہ۔))

’’ آپ صلی اللہ علیہ وسلم جو چیز بھی دیکھتے جس میں صیلب کا نشان ہوتاآپ صلی اللہ علیہ وسلم اسے توڑ دیتے اور ایک روایت یہ لفظ ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم اسے ٹکڑے ٹکڑے کر دیتے۔

ھذا ما عندي والله أعلم بالصواب

فتاویٰ ابن بازرحمہ اللہ

جلداول -صفحہ 78

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ