سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(266) اجنبی عورت سے مصافحہ

  • 7631
  • تاریخ اشاعت : 2013-11-02
  • مشاہدات : 857

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

اجنبی عورت سےمصافحہ کرنےکےبارےمیں کیاحکم ہےجب کہ اس نےکسی کپڑےوغیرہ کےساتھ ہاتھ کوچھپارکھاہو،اگرمصافحہ کرنےوالامردجوان یابوڑھاہویاعورت بڑھیاہوتوکیااس سےحکم مختلف ہوگا؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

غیرمحرم عورتوں سےمصافحہ کرنامطلقاجائزنہیں خواہ عورتیں جوان ہوں یابوڑھی اورخواہ مصافحہ کرنےوالامردجوان ہویابہت ہی بوڑھاکیونکہ اس میں دونوں کےلئےفتنہ کاخطرہ ہےاورصحیح حدیث میں بھی ہےکہ رسول اللہﷺنےفرمایاکہ‘‘میں عورتوں سےمصافحہ نہیں کرتا۔’’حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سےروایت ہے کہ رسول اللہ ﷺکاہاتھ کبھی بھی کسی (غیرمحرم) عورت کے ہاتھ کو نہیں لگا،آپؐ عورتوں سے بیعت زبانی لیا کرتےتھے (یعنی بیعت کے وقت بھی آپؐ اپنا دست مبارک کسی عورت کے ہاتھ کو نہیں لگاتے تھے) ’’اوراس اعتبارسے کوئی فرق نہیں کہ درمیان میں کوئی چیز حائل ہویا نہ ہو،جیسا کہ دلائل کے عموم کا اورفتنہ تک پہنچانے والے ذرائع واسباب کے سدباب کابھی یہی تقاضا ہے۔

 

 

مقالات وفتاویٰ ابن باز

صفحہ 365

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ