سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(142) میراپڑوسی رات کو بہت (دیرتک) بیدار اور نماز فجر کے وقت سویا رہتا ہے

  • 7507
  • تاریخ اشاعت : 2013-11-01
  • مشاہدات : 357

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

میراایک دوست میرے بہت ہی قریب رہتا ہے ،مسجد بھی ہمارے گھر سے بہت ہی قریب ہے لیکن میرا دوست نماز فجر کے لئے مسجد میں نہیں جاتا کیونکہ وہ رات ٹیلی وژن دیکھنے اورتاش کھیلنے کے لئے صبح کی ابتدائی گھڑیوں تک بیداررہتا ہے اورپھر نماز صبح طلوع آفتاب کے بعد اداکرتا ہے۔میں نے اسے بہت سرزنش کی لیکن اس کا عذر یہ ہوتا ہے کہ وہ صبح کی اذان نہیں سنتا حالانکہ مسجد ہمارےگھر کے بہت ہی قریب ہے ۔میں نے کہا کہ نماز کے لئے میں تمہیں بیدار کردیا کروں گا،چنانچہ فی الواقع میں نے اسے بیداربھی کیا لیکن اس کے باوجود اسے مسجد میں نہ دیکھا اورنماز سے واپس آکر دیکھاتووہ سویا ہوا تھا۔میں نے اسے سرزنش کی تو اس نے بودے حیلے بہانے پیش کرنے شروع کردئیے حتی کہ بسااوقات اس نے یہ بھی کہا ‘‘کیا قیامت کے دن اللہ تعالی تم سے میرے بارے میں اس لئے باز پرس کرے گا کہ میں تمہارا پڑوسی تھا؟’’براہ کرم رہنمائی فرمائیں اوربتائیں ،کیا نماز کے لئے اسے بیدار کرنا میری ذمہ داری ہے یا نہیں؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

کسی مسلمان کے لئے یہ جائز نہیں کہ وہ رات کو اس قدر بیداررہے جس کی وجہ سے وہ نماز فجر باجماعت یا بروقت ادانہ کرسکے خواہ یہ بیداری قرآن مجید کی تلاوت یا طلب علم ہی کے لئے ہو،تو اس سے اندازہ فرمائیے کہ ٹیلی وژن دیکھنے اورتاش کھیلنے کے لئے بیداری کی کہاں تک گنجائش ہوسکتی ہے؟

اپنے اس عمل کی وجہ سے یہ شخص اللہ تعالی کی سزاکا مستحق ہے نیز یہ اس بات کا مستحق ہے کہ حکمران بھی اسے سزادیں جس کی وجہ سے یہ اوراس جیسے دیگر لوگ اپنی اصلاح کرلیں ۔ نماز فجر کو دانستہ طلوع آفتاب تک موخر کرنا تمام اہل علم کے نزدیک کفر اکبر ہے کیونکہ نبی کریمﷺنے فرمایا ہے کہ:

 ( (بين الرجل وبين الكفر والشرك ترك الصلوة ) ) (صحيح مسلم)

‘‘آدمی اورکفر وشرک کے درمیان فرق،ترک نماز سے ہے۔’’

نیزآنحضرت ﷺنے فرمایاہےکہ:

 ( (العهد الذي بيننا وبينهم الصلاة ’فمن تركها فقد كفر) )

‘‘ہمارے اوران (کفارومشرکین) کے درمیان عہد ،نماز ہے جو اسے ترک کردے وہ کافر ہے۔’’

اس حدیث کو امام احمد اوراہل سنن نےحضرت بریدہ حصیب رضی اللہ عنہ سےصحیح سندکے ساتھ روایت کیا ہے۔اس باب میں اوربھی بہت سی احادیث اورآثار ہیں جو اس بات پر دلالت کرتے ہیں کہ جوشخص جان بوجھ کر کسی شرعی عذر کے بغیر نماز کو اس قدر موخر کرے کہ اس کاوقت ختم ہوجائے تووہ کافر ہے لہذا ہرمسلمان پریہ واجب ہے کہ وہ نماز بروقت اداکرے اوراس کے لئے اپنے اہل خانہ یا بھائیوں اوردوستوں میں سے کسی کی مددلے یا گھڑی کا لارم لگالیا کرے جس کی وجہ سے بروقت بیدار ہوسکے۔

سوال کرنے والے بھائی!آپ بھی اپنے دوست کی مددکیجئے ،اسے کثر ت سے سمجھائیے اوراس کے باوجود اگریہ اپنے اس قبیح عمل پر اصرارکرےتومرکز الھیئۃ میں اس کی شکایت کیجئے تاکہ اسے مناسب سزابھی دی جاسکے ۔ہم اللہ تعالی سےسب کے لئے ہدایت اورحق پر استقامت کی دعاکرتے ہیں۔

 

مقالات وفتاویٰ ابن باز

صفحہ 249

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ