سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(323) شادی میں باجہ یعنی یک طرفہ دف بجانے کی ممانعت ہے یا نہیں؟

  • 6876
  • تاریخ اشاعت : 2013-09-16
  • مشاہدات : 743

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

شادی میں باجہ یعنی یک طرفہ دف بجانے کی ممانعت ہے یا کیا بعض کہتے ہیں۔ کہ حضرت خدیجۃ الکبریٰ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے عقد میں یک طرفہ دف بجایاگیا تھا۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

مسنون طریق نہیں ہے۔ اگر اس کو مذہبی رسم سمجھتا ہے تو بدعت ہے ایسا نہیں سمجھتا تو لغو ہے واللہ اعلم۔ (اخبار اہلحدیث امرتسر 10 مارچ 1939ء)

تعاقب

سال رواں کے نمبر 19 پرچہ میں نمبر 89 سوال کے جواب میں جناب تحریرفرماتے ہیں۔ کہ اگر نکاح میں دف مذہبی رسم جان کر بجاتا ہے۔ تو بدعت ورنہ لغو۔ اس کے متعلق عرض ہے۔ کہ ایک قولی حدیث میں نکاح میں دف بجانا مشروع بلکہ نکاح کا اعلان دف کے زریعہ سے مستحب معلوم ہوتا ہے۔ ملاحظہ ہومشکواۃ ص 273 عن عائشہ۔ رضوان اللہ عنہم اجمعین

واضربوا عليه بالدف رواه الرمذي وقال هذا حديث غريب

یہ حدیث غریب ہے مگر اس کی تائید اور تقویت زیل کی حدیث سے ہوتی ہے۔ وھوا ھذاعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272) اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272) اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہعن محمد بن حاطب الجمع۔ ۔ ۔ (ابن ماجہ مشکواۃ۔ ص272)اور یہ حدیث حسن قابل احتجاج ہے۔ کما قال الترمذی واللہ اعلم۔ (راقم الحروف ابو نعمان انیس الرحمان نعمانی مدرسہ اسلامیہ مرشد آباد بنگال۔ (اہلحدیث امرتسر 19 رجب سن58ہجری)

مفتی

فتوے میں سہو ہوگیا تھا تعاقب صحیح ہے۔ واللہ اعلم وعلمہ اتم (اہلدیث امرتسر 15 ستمبر 1939ء)

فتاویٰ ثنائیہ

جلد 2 ص 287

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ