سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(243) الفاظ "اسے لے جاؤ" سے طلاق ہوتی ہے؟

  • 6835
  • تاریخ اشاعت : 2024-03-02
  • مشاہدات : 1208

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

زید کی شادی ایک نیک عورت سے ہوئی جو تین چار بچوں کی ماں ہے مگر زید شروع ہی سے اس کو کئی دفعہ مار کر گھر سے نکال چکا ہے۔ عورت نیک ہے خود آجاتی ہے۔ ایک دفعہ اس کے بھائی کو بلا کر مار پیٹ کر کہہ دیا کہ اسے لے جاؤ۔ مجھے اس کی ضرورت نہیں بچے چھین لیے اور گھر سے نکال دیا کیا اس صورت میں طلاق ہوسکتی ہے۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

الفاظ’’لے جاؤ مجھے اس کی ضرورت نہیں‘‘ اسے طلاق کنائی واقع ہوگئی ہے۔

شرفیہ

میں کہتا ہوں کہ گو اصل حدیث انما الاعمال بالنیات  صحیح بخاری میں ہے مگر دل کی کیفیت متکلم کے سو اللہ ہی کو معلوم ہے لہذا ظاہری دلالت وہی ہے جو مجیب مرحوم نے لکھی ہے۔

  ھذا ما عندي والله أعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ امرتسری

جلد 2 ص 197

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ