سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(55) مسئلہ تقدیر

  • 556
  • تاریخ اشاعت : 2012-04-26
  • مشاہدات : 1149

سوال


السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

مسئلہ تقدیرکی کیااصلیت ہے اورکسب اورخلق میں کیافرق ہے ؟یعنی جن اشخاص کوخداتعالی نے دوزخی بنادیاہے اوران کواسی کے لیے پیداکیاتوپھران پرکیاالزام ہے ؟اورپھران سے انبیاء کی اتباع وتصدیق کامطالبہ کرناکیسے صحیح ہوسکتاہے ؟ازراہ کرم کتاب وسنت کی روشنی میں جواب دیں۔ جزاكم الله خيرا


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد! 

مسئلہ تقدیرکی اصلیت دو چیزیں ہیں ایک علم ایک قدرت ،علم اس طرح کہ  بندے کو جب خدا نے پیدا کیا تو اس نے نیکی کرنی تھی یا بدی۔ اس کا علم اللہ تعالی کوپہلے ہی تھا۔سو اس کو لوح محفوظ کی صورت میں پہلے ہی لکھ دیا۔ لوگ جوکہتے ہیں کہ اللہ تعالی نے لکھا اس لیے بندے نے کیا یہ غلط ہے بلکہ یوں کہنا چاہیے کہ بندے نے کرنا تھا۔ اس لیے اللہ تعالی نے لکھاہے۔ چنانچہ حدیث میں ہے قلم کوحکم ہوا’’اُکتب‘‘ لکھ۔ قلم نے کہا’’مااکتب‘‘(میں کیالکھوں) حکم ہوا۔

«اکتب القدرفکتب ماکان وماہوکائن الی الابد»

ترجمہ :۔تقدیرلکھ!پس قلم نے جوکچھ ہوچکا تھا اورجوکچھ ہوناتھا لکھ دیا۔

بتلایئے! اس میں اللہ کا کیا قصور؟ ہاں اگراللہ کا لکھنا بندے کےلیے رکاوٹ ہوتا تو پھر اعتراض کرنے والا اعتراض کرسکتا تھا کہ بندے کا کیا قصور؟ لیکن جب ایسا نہیں بلکہ بندے نے جو کچھ کرناتھا قلم نے خدا کے حکم سے وہی لکھا۔ پھر اتنے پربھی بندے کو نہیں پکڑا۔ بلکہ بندے نے جب فعل کرلیا اس وقت پکڑا۔ پس اب علم کے لحاظ سے کوئی اعتراض نہ رہا زیادہ وضاحت کے لیے اس کویوں سمجھئے کہ اگربالفرض خدا کوعلم نہ ہوتا تو بھی بندے نے نیکی یا بدی کرنی تھی۔ تو اللہ تعالی کوعلم ہونے سے کونساجبرآ گیا۔

رہا قدرت کاملہ ، سو یہ نہایت نازک ہے بڑے بڑے عقلاء اس میں حیران ہیں۔ خدا تعالی بندوں کوہرطرح سے آزماتا ہے۔ بدنی آزمائشیں بھی آتی ہیں ،عقلی بھی۔ تقدیر کا مسئلہ عقلی آزمائش ہے مگر اس کو ایسا بھی نہیں کیا کہ بالکل مبہم رکھا ہو۔ بلکہ ایمان کے لیے جس قدرضرورت تھی اتنا پردہ اٹھا دیا۔ تفصیل اس کی یہ کہ ہرمخالف موافق اس بات کوتسلیم کرتاہے کہ اللہ تعالی ہرنقص وعیب سے پاک ہے اور یہ بھی ظاہر ہے کہ جبر جیسا کوئی نقص نہیں۔ ایک تو اس میں حکمت کا خلاف ہے کہ خود ہی ایک فعل کرے اور اس پرسزا دے۔ دوسرے اس میں بندے کو ناحق تکلیف دیناہے۔ جس کو ادنیٰ سے ادنیٰ عقل والا بھی اچھا نہیں سمجھتا۔ ایک کی جان دکھ میں ہو۔ دوسرے کا تماشہ ، اور اس میں بھی شبہ نہیں کہ اللہ تعالی قادرمطلق ہے۔ جس کا اثر اس کا خالق ہوناہے۔ اگربندہ بھی خالق ہو تو یہ شرک فی الربوبیت ہے جو بڑا شرک ہے۔ پس معلوم  ہوا کہ بندہ مجبوربھی نہیں اورمختارمطلق بھی نہیں۔ بلکہ اس کی حالت بین بین ہے جس کو کسب اور اکتساب سے تعبیر کیا جاتاہے۔ پس ایمان کے لیے اتنی معرفت کافی ہے۔ کیونکہ ایمان کے لیے یہ ضروری نہیں کہ حقیقت شے کا علم ہو تب ایمان لائے۔ دیکھیے روح کی حقیقت ہم نہیں جانتے لیکن اس کے آثار کی وجہ سے ہم مانتے ہیں۔ اسی طرح خدا کی ذات وصفات پرہم ایمان رکھتے ہیں۔ لیکن کنہ وحقیقت کا علم نہیں ٹھیک اسی طرح کسب واکتساب کوسمجھ لینا چاہیے۔ اس کے آگے بحث میں خیر نہیں۔ اسی لیے رسول اللہﷺ نے مسئلہ تقدیر میں بحث سےمنع فرمایاہے۔ میرے ذہن میں اس کے متعلق بہت سے مضامین ہیں۔ کوئی موقع ہوا توتفصیل ہوگی۔ انشاء اللہ العزیز۔

وباللہ التوفیق

فتاویٰ اہلحدیث

کتاب الایمان، مذاہب، ج1ص132 

محدث فتویٰ


ماخذ:مستند کتب فتاویٰ