سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(698) درود میری قبر پر پڑھا جائے تو میں اُس کو سنتا ہوں..الخ

  • 5065
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-28
  • مشاہدات : 1384

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

مشکوٰۃ میں حدیث ہے کہ نبی کریم  صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا کہ دور سے درُود مجھ پر پہنچایا جاتا ہے میری قبر پر پڑھا جائے تو میں اُس کو سنتا ہوں کیا یہ حدیث صحیح ہے کہ نہیں اور جماعت اہل حدیث کا عقیدہ اس کے متعلق کیا ہے ؟

                                                                                            (محمد یوسف ثاقب)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

سوال میں ذکر کردہ روایت کا صاحب مشکاۃ حوالہ دیتے ہیں: رواہ البیہقی فی ( شعب الایمان) اس کی سند میں محمد بن مروان سدی راوی کذاب ہے ۔ اس لیے یہ روایت ثابت نہیں انتہائی کمزور ہے۔1 واللہ اعلم

رہا اہل حدیث کا عقیدہ تو اس سلسلہ میں ہمارے شیخ و استاذ شیخ الحدیث والتفسیر مولانا محمد اسماعیل صاحب سلفی  رحمہ اللہ تعالیٰ کی مایہ ناز کتاب ’’ الأدلۃ القویۃ علی أن حیاۃ الانبیاء فی قبورھم لیست بدنیویۃ‘‘ المعروف ’’حیاۃ النبی صلی اللہ علیہ وسلم ‘‘کا مطالعہ فرما لیں۔                                    ۲۴؍۵؍۱۴۲۳ھ


قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام ومسائل

جلد 02 ص 702

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ