سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(514) احرام باندھنے کے لیے حرم کی حدود سے باہر جائے یا نہیں؟

  • 4882
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-26
  • مشاہدات : 444

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

جس شخص نے عمرہ کرنا ہو اور وہ مکہ کا رہائشی ہو کیا وہ احرام باندھنے کے لیے حرم کی حدود سے باہر جائے یا نہیں؟                            (قاری عبدالصمد بلوچ)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

رسول اللہ  صلی الله علیہ وسلمنے میقات احرام بیان فرمائے تو بعد میں فرمایا: (( ھُنَّ لَھُنَّ ، وَلِمَنْ أَ تٰی عَلَیْھِنَّ مِنْ غَیْرِ أَھْلِھِنَّ مِمَّنْ أَرَادَ الْحَجَّ أَوِ الْعُمْرَۃَ وَمَنْ کَانَ دُوْنَھُنَّ فَمِنْ حَیْثُ أَنْشَأَ حَتّٰی أَھْلُ مَکَّۃَ مِنْ مَکَّۃَ۔ أو کما قال  صلی الله علیہ وسلم۔ ))1 [’’یہ مقامات وہاں کے رہنے والوں کے لیے ہیں اور ان کے لیے بھی جو وہاں سے گزر کر آئیں۔ وہاں کے مقیمی نہ ہوں جو حج یا عمرہ کا ارادہ رکھتے ہوں اور جو ان مقامات کے اندر ہے، پس وہ احرام باندھے، جہاں سے شروع کرے، حتی کہ مکہ والے مکہ ہی سے۔ ‘‘]

1 بخاری ؍ کتاب الحج ؍ باب مھل اہل مکۃ للحج والعمرۃ

 

قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام ومسائل

جلد 02 ص 448

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ