سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(509) کیا مقروض حج یا عمرہ کرسکتا ہے؟

  • 4877
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-26
  • مشاہدات : 476

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا مقروض حج یا عمرہ کرسکتا ہے۔ میں نے سنا ہے کہ حج یا عمرے کے لیے پہلے قرض ادا کرنا ضروری ہے کیا یہ درست ہے۔ قرضے کی دو قسمیں ہیں ایک یہ کہ میں کسی سے قرض لوں اور مقرر مدت کے بعد ادا کردوں اور دوسرا جاری قرضہ جیسے کسی دکان سے اشیاء صرف ادھار لیں اور 3، 3 ماہ بعد رقم دیتے رہیں۔ کیا ایسا قرضہ ادا کرنا ضروری ہے حج یا عمرہ کے لیے یاکہ  کوئی اور قرض ہے؟                  (محمد افراہیم ، آزاد کشمیر)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے: { وَلِلّٰہِ عَلَی النَّاسِ حِجُّ الْبَیْتِ مَنِ اسْتَطَاعَ اِلَیْہِ سَبِیْلًا } [آل عمران: ۹۷] [’’ اللہ تعالیٰ نے ان لوگوں پر جو اس کی طرف راہ پاسکتے ہیں، اس گھر کا حج فرض کردیا ہے۔ ‘‘] اگر مقروض میں استطاعت ہے تو حج عمرہ کرے۔ ہاں قرضہ ادا کرنا ضروری ہے۔ حج عمرہ پہ روانگی سے پہلے ادا کردے تو فبھا ورنہ جن کا دینا ہے ان سے مہلت لے لے۔ اور واپس آکر قرض ادا کردے، اگر موت تک قرض ادا نہیں کرسکا تو اس کے ترکہ سے پہلے قرض ادا کیا جائے گا۔ اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے: { مِنْ م بَعْدِ وَصِیَّۃٍ یُّوْصٰی بِھَا أَوْدَیْنٍ }[النسائ: ۴؍۱۱][’’ وصیت کے بعد جو مرنے والا کرگیا یا ادائے قرض کے بعد۔‘‘ ]

 

قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام ومسائل

جلد 02 ص 443

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ