سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(349) ایک آدمی باوجود بڑی مسجد کے محلہ کی چھوٹی مسجد میں اعتکاف..الخ

  • 4182
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-15
  • مشاہدات : 531

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ایک آدمی باوجود بڑی مسجد کے محلہ کی چھوٹی مسجد میں اعتکاف بیٹھتا ہے، اور نماز مغرب کے بعد حقہ نوشی بھی کرتا ہے اور بڑی مسجد گائوں کی چھوڑ کر دوسرے گائوں میں جو نصف میل کے قریب ہے، نماز جمعہ ادا کرتا ہے، کیا اس کا اعتکاف صحیح ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

جمہور علماء کے نزدیک اعتکاف ہر مسجد میں جائز ہے، اس لیے شخص مذکور کا اعتکاف صحیح ہے، البتہ حقہ نوشی کرتا ہے، یہ ممنوع ہے، آنحضرت ﷺ نے مضر اشیاء سے منع فرمایا ہے، نیز حدیث شریف میں ضروری حاجت کے سوا جائے اعتکاف سے نکلنا منع فرمایا ہے، اور اس غرض فاسد (حقہ نوشی) کے لیے باہر آنا اعتکاف کے لیے خارج ضرور ہے، واللہ اعلم (۹ دسمبر ۱۹۲۸ئ)

شرفیہ:

… یہ صحیح ہے، مگر نماز جمعہ فرض ہے، اور اعتکاف سنت ہے، اگر جمعہ ترک کرے تو ممنوع ہے، اور نکلنے کا ثبوت نہیں ملتا۔ لہٰذا جہاں جمعہ ہو وہیں اعتکاف لازم ہے، اور حقہ کشی کے باعث باہر نکلنے سے اعتکاف باطل ہو جاتا ہے۔ ((السنۃ علی المعتکف ان لا یعود مریضا ولا یشھد جنازۃ ولا یمس امرأۃ ولا یباشرھا ولا یخرج لحاجۃ الا لما لا بد منہ رواہ ابو داؤد)) اور حقہ تو جائز ہی نہیں ہے۔ (ابو سعید شرف الدین دہلوی) (فتاویٰ ثنائیہ جلد ۱ ص ۴۳۲)


فتاویٰ علمائے حدیث

جلد 06 ص 458

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ