سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(36) رمضان میں وضو کے بغیر کلی کرنا یا ضروری غسل واجب کے بغیر نہانا

  • 4039
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-13
  • مشاہدات : 471

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

زید کہتا ہے کہ رمضان میں وضو کے بغیر کلی کرنا یا ضروری غسل واجب کے بغیر نہانا جائز نہیں ہے، بکر کہتا ہے گرمی کی بناء پر جائز ہے، دونوں میں سے کس کا قول صحیح ہے


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

بکر کا قول صحیح ہے۔ (اخبار اہل حدیث سوہدرہ جلد نمبر ۴ شمارہ نمبر ۲۴) (۸ شوال ۱۳۰۱ھ)

توضیح:…امام بخاری رحمہ اللہ نے صحیح بخاری میں بایں الفاظ باب منعقد کیا ہے۔

((باب اغتسال الصائم وَبَلَّ ابن عمر ثوباً فالقی علیہ وھو صائم ودخل الشعبی الحمام وھو صائم وقال الحسن لا باس بالمضمضۃ والتبرد للصائم))

صحابہ اور تابعین کے اقوال ذکر کرنے کے بعد غسل جنابت کی حدیثیں لا کر ثابت کیا ہے کہ روزہ کی حالت میں غسل کرنا روزہ کے منافی نہیں۔ خواہ غسل جنابت ہو یا غسل گرمی وغیرہ کے لیے ہو۔ ہذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب۔ (الراقم علی محمد سعیدی خانیوال)


 

فتاویٰ علمائے حدیث

جلد 06 ص 107

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ