سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(200) زید نے ایک لاری قرضہ برداشت کرکے خرید کی الخ۔

  • 3973
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-12
  • مشاہدات : 314

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
زید نے ایک لاری قرضہ برداشت کرکے خرید کی، کچھ مدت بعد اسے فروخت کردیا، حساب کرنے سے معلوم ہوا کہ قرضہ ادا کرنے کے بعد اتنی رقم بچ رہی جو پر زکوٰۃ واجب ہے اب اس رقم پر زکوٰۃ کب واجب ہو گی؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

زید نے ایک لاری قرضہ برداشت کرکے خرید کی، کچھ مدت بعد اسے فروخت کردیا، حساب کرنے سے معلوم ہوا کہ قرضہ ادا کرنے کے بعد اتنی رقم بچ رہی جو پر زکوٰۃ واجب ہے اب اس رقم پر زکوٰۃ کب واجب ہو گی؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیلکم السلام ورحمة اللہ وبرکا
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

 جس روز قیمت وصول ہوئی ہے، اس روز سے ایک سال گزرنے کے بعد زکوٰۃ واجب الادا ہو گی۔ اللہ اعلم۔ (اہل حدیث ۳۶ رجب ۱۳۶۲ھ) (فتاویٰ ثنائیہ جلد اول ص ۴۶۱)

فتاویٰ علمائے حدیث

جلد 7 ص 303

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ