سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(193) مال زکوٰۃ سے حج کرنا جائز ہے یا نہیں ۔

  • 3966
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-12
  • مشاہدات : 267

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
 ایک شخص موحد دین دار ہے، حج بیت اللہ کا نہایت ہی شاء ہے، لیکن وجہ غربت و ناداری حج نہیں کر سکتا، اس لیے بعض امراء سے درخواست ہے کہ مجھے زکوٰۃ سے روپیہ دیں تاکہ حج کر آؤں ، کیا ایسے شخص کو حج کے لیے زکوٰۃ دینی جائز ہے؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

 ایک شخص موحد دین دار ہے، حج بیت اللہ کا نہایت ہی شاء ہے، لیکن وجہ غربت و ناداری حج نہیں کر سکتا، اس لیے بعض امراء سے درخواست ہے کہ مجھے زکوٰۃ سے روپیہ دیں تاکہ حج کر آؤں ، کیا ایسے شخص کو حج کے لیے زکوٰۃ دینی جائز ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیلکم السلام ورحمة اللہ وبرکا
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

 قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ نے زکوٰۃ کے آٹھ مصرف بیان فرمائے ہیں، جن میں ایک مصرف فی سبیل اللہ بھی ہے، اور وہ عام ہے، اور ہر کار خیر کو شامل ہے، جس میں حج بھی شامل ہے، حضرت امام بخاری اس مصرف کو مانتے ہوئے اپنی صحیح کتاب میں لکھتے ہیں:   ((الزکوٰة فی الحج)) ’’یعنی زکوٰۃ کے روپیہ سے حج کرا دینا،‘‘ اور ابو داؤد شریف میں ہے خود آنحضرتﷺ نے زکوٰۃ کے اونٹ سے ایک صحابی کو حج کرا دیا تھا۔ امام ابو یوسف رحمۃ اللہ علیہ کا بھی فتویٰ کتب فقہ میں مرقوم ہے، کہ مال زکوٰۃ سے حج کرا دیا جائے، تو اس صورت مذکورہ میں شخص مذکورہ کو حج کے لیے رقم مد زکوۃ سے دینا جائز ہے، اور وہ اس سے حج کر سکتا ہے۔ (محمد یونس دہلی) (اہل حدیث گزٹ شمارہ نمبر ۱۵ جلد نمبر۸)

فتاویٰ علمائے حدیث

جلد 7 ص 299

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ

ABC