سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(92) زکوٰۃ اور صدقہ فطر اپنے ہاتھ سے دینا جائز ہے یا نہیں۔

  • 3570
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-05
  • مشاہدات : 467

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

 زکوٰۃ اور صدقہ فطر کا روپیہ یا مال اپنے ہاتھ سے دینا جازء ہے یا نہیں؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیلکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

 مسلمانوں کا اگر امام یعنی خلیفہ ہے، تو زکوٰۃ اور صدقہ الفطر امام کو دینا چاہیے۔ والا اپنے ہاتھ سے اس کے مصارف میں صرف کرے۔
((عن جریر بن عبد اللّٰہ قال قال رسول اللّٰہ ﷺ اذا اتاکم المصدق فلیصد رعنکم راض رواہٗ مسلم وغیرہ وعن جریر ابن عبد اللّٰہ قال جاءتا س یعنی من الاعراب فی رسول اللّٰہ وان ظلمونا قال ارضوا مصدقیکم وان ظلمتم رواہ ابو داود وعن جابر بن عتیک قال قال رسول اللّٰہ ﷺ سیاتیکم رکبی مبغضون فاذا اجاؤکم فرحبوابہم دخلوا بینہم وبین ماء ییتبغون فان عدلوا فلانفسہم وان ظلموا فعلیہم وارضو هم فان تمام زکوٰتکم رضاہم ولید عواکتم رواہ ابو داؤد وبکذا فی مشکوة المصابیح))
اور تلخیص الجیر میں ہے:
((حدیث ان سعد بن ابی وقاص وابا هریرة وابا سعید الخدری مسئلوا عن الصرف الی الولاة الجائرین فامروا به رواہ سعید بن منصور عن عطاف بن خالد وابی معاویہ وابن ابی شیبة عن بشر بن المفضل ثلاٹتہم عن سہیل بن ابی صالح عن ابیه اجتمع نفقة عندی فیہا صدقتی یعنی بلغت نصاب الزکوٰة فسلت سعد بن ابی وقاص وابن عمر وابا هریرة وابا سعید الخدری اقسمھا اوافعہا الی السلطان فقالو اوفعہا الی السلطان ما اختلف علی منہم احدو فی روایة قالت لہم ہذا السلطان یفعل ما ترون فادفع الیه زکوٰة فقالوا نعم رواہ البیہقی عنہم وعن غیرہم ایضاً وروی ابن ابی شیبة من طریق قمزعۃ قال قلت لابن عمر ان لی مالا فالی من ادفع الزکوٰة قال ادفعہا الی هولاء القوم یعنی الامراء یعنی الامراء قلت اذاً یتخذوں بہاثیاباً وطیبا قال وان ومن طریق نافع قال قال ابن عمر اوفعوا اموالکم الی من ولاہ اللّٰہ امر کم فمن برفلنفسه دمن اغم فعلیہا فی الباب عندہٗ عن ابی بکر الصدقی وعن المغیرة بن شعبه وعائشة انتہیٰ۔ واللّٰہ اعلم وعلمه اتم))
(کتبہٗ محمد بشیر عفی عنہٗ( سید محمد نذیر حسین) (فتاویٰ نذیریہ جلد اول ص ۵۰۴)

فتاویٰ علمائے حدیث

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ