سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(79) عشر یا فطر یا چرم قربانی اپنے ہاتھ سے خرچ کرنا جائز ہے، یا نہیں۔

  • 3557
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-05
  • مشاہدات : 426

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

 غلہ عشر یا فطر یا چرم قربانی اپنے اپنے ہاتھ سے خرچ کرنا جائز ہے، یا نہیں؟ اگرچہ سردار بھی بطور نام نہاد سن بزرگ جو کہ موجود ہوں، کیا ان کی اجازت یا مشورے سے خرچ کیا جائے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

مقررہ سردار کی بیعت کے وقت چرم قربانی وغیرہ کا انتظام اگراس کے ہاتھ میں دیا گیا ہے، اور سب بیعت کنندوں نے تسلیم کیا ہے، تو اس کی معرفت خرچ کرنا چاہیے، اور اگر سردار یا امیر کوئی نہیں تو خود تقسیم کر سکتا ہے۔  ((لِحَدِیْثٍ اِنْ لَمْ یَکُنَّ اَمِیْرٌ الحدیث)) (۱۳ مئی ۱۹۳۰ئ) (فتاویٰ ثنائیہ جلد اول ص ۴۷۶)

فتاویٰ علمائے حدیث

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ