سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(35) کیا قنوت میں اهدني پڑھنا مکروہ ہے۔؟

  • 3514
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-05
  • مشاہدات : 566

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا قنوت میں اهدني  پڑھنا مکروہ ہے۔؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

قنوت میں اهدني پڑھنا مکروہ نہیں۔بلکہ سنت نبویہ ﷺ سے اخبار اہل حدیث مورخہ 22 زی الحجہ 1342 ہجری صفحہ 13 میں مولانا ابو القاسم صاحب بنارسی کا قنوت میں امام کے لئے  اهدني بلفظ مفرد پڑھنا مکروہ بلکہ ممنوع بتانا رسالت مآب ﷺ کےفعل کی توہین اورجرات عظیمہ ہے سنت نبوی ﷺ کو بنظر کراہیت دیکھنا ہے۔جناب شارع علیہ الصلواۃ و سلام نے خود بحالت امام جماعت قنوت میں اهدني بلفظ مفرد پڑھا۔جیسا کہ مولانا عبد لوہاب صاحب محدث دہلوی کافتویٰ ہدایۃ النبی میں مولانا عبد لجلیل صاحب سورتی کا تعلیم الدین میں لکھا ہوا ہے۔اب نبوی ﷺ فتویٰ ملاحظہ کیجئے۔

عن ابي هريره قال قال رسول الله صلي الله عليه وسلم اذا رفع راسه من الركوع في صلواة الصبح في الركعة الثانية رفع يديه فيد عو بهذا الدعا ء اللهم اهدني فيمن هديت وعافني فيمن عافيت وتولني فيمن توليت وبارك لي فيما اعطيت وقني شر ما قضيت الخ

(مستدرک حاکم۔کذافی التلخیص جلد 1 ص95)

یعنی رسول اللہ ﷺ صبح کی نماز میں بحالت امام اهدني اور عافني اور تولني اور بارك لي اور وقني بلفظ مفرد و بغیر لفظ جمع کے پڑھتے تھے۔اس شرح صاف صحیح حدیث کے ہوتے ہوئے امام نووی ؒ کا قول پیش کرنا دوسری جرائت عظیمہ ہے۔اس سے رسول للہﷺ کے فعل (قال اهدني)پر مکروہ و ممنوع کا دھبہ آتا ہے۔حالانکہ شان رسالت ﷺ خاص کر احکام الٰہی ان عیوب سے پاک صاف ہے جو کچھ آپ نے کیا پس اہل حدیث کےلئے وہی سنن الھدیٰ وسواء الطریق الی المطلوب و اُسوء  حسنہ ہے۔بارشاد خدا تعالیٰ

لَّقَدْ كَانَ لَكُمْ فِي رَسُولِ اللَّـهِ أُسْوَةٌ حَسَنَةٌ

نتیجہ

آپ کے عمل کے خلاف اھدنا بلفظ جمع پڑھنا خلاف سنت ہے۔پس ان اقوال الرجال سے نبوی تعامل زیادہ قابل قدر و لائق عمل ہے۔ورنہ اتباع سنت کا دعویٰ غلط فقط

(العاجز احمد بن محمد۔مرحوم۔مفتی اہل حدیث دہلی فتاویٰ ستاریہ جلد نمبر 1 ص59)

 

فتاویٰ علمائے حدیث

جلد 12 ص 126

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ