سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(34) زکوٰۃ کا پیسہ متقی پرہیز گار کا حق ہے، یا ہر مسکین‘ غریب کا۔

  • 3513
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-05
  • مشاہدات : 408

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

 زکوٰۃ کا پیسہ متقی پرہیز گار کا حق ہے، یا ہر مسکین غریب کا بہت روپیہ ہونے پر چند مساکین کو دینا چند کو نہ دینا مساکین کی حق تلفی ہے یا نہیں۔ پڑوسی سید کو حق پڑوسی سمجھ کر زکوٰۃ دینا کیسا ہے؟ اور غریب لاچار ہندو کو زکوٰۃ دے سکتے ہیں یا نہیں؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

 مصرف زکوٰۃ غریب مساکین ہیں، اس میں مومن کافر کی تمیز نہیں،{اِنَّمَا الصَّدَقَاتُ لِلْفُقَرَائِ الایة} غریب سید کے ساتھ اور طرح سے سلوک کریں زکوٰۃ ان پر حرام ہے۔ (۱۲ ذی قعد: ۱۳۴۳ھ) (فتاویٰ ثنائیہ جلد اول ص ۴۷۹)

ھٰذا ما عندي والله أعلم بالصواب

فتاویٰ علمائے حدیث

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ