سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(16) ہندو اور مسلمان کے درمیاں سودی لیں دین

  • 3115
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-01
  • مشاہدات : 850

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا فرماتے ہیں علماء دین و مفتیان شرع متین درباب سود کے کہ فی زمانہ اکثر اہل اسلام بدلیل اس کے کہ یہ ملک دارالحرب ہے اور دارالحرب میں سود لینا درست ہے۔آپس میں ہندئوں اور مسلمانوں سے سود لیتے ہیں۔اور دیتے ہیں۔آیا اس حیلہ سے سود لینا مسلمانوں کواس ملک  میں درست ہے یا نہیں بینوا توجروا۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

دو صورت مرقومہ جاننا چایئے۔سود کا لینا اور دینا کواہ دارالاسلام ہو خواہ دارالحرب میں حرام اور ممنوع ہے۔نزدیک امام مالک۔امام شافعی۔امام احمد ۔اور امام یوسف اور جمہور علماء رحمہم اللہ کے کیونکہ قرآن و حدیث اور اجماع صحابہ  سے حرمت ربوا کی ثابت ہے ۔قطعاً مگر امام ابو حنیفہ  ۔امام محمد فرماتے ہیں۔کہ دارالحرب میں کافر حربی سے سود لینا درست ہے۔جیسا کہ ہدایہ وغیرہ سے معلوم ہوتا ہے۔ملک ہندوستان رنگون سے لے کر پشاور تک ہر گز دارالحرب نہیں۔مطابق مذہب امام صاحب کے اس لئے کہ موافق تحقیق اور تنقیح علمائے متاخرین حنفیہ کے دارالحرب کی تعریف نذدیک امام کے یہ ہے۔کہ جب کہ کل شعائر اسلام کے موقوف ہو جاویں تو اس صورت میں دارالاسلام دارالحرب ہوجاتا ہے۔اور جب تک ایک سبب بھی شعائر اسلام کا موجود ہوگا تو دارالحرب نہ ٹھہرا ۔نذدیک امام صاحب کے بھی حرام و ممنوع ہوگا۔

وله ان هذه البلدة صارت دارالسلام با جراء احكام الاسلام فيها فما بقي شئي من احكام دارالسلام فيها يبقي دارالسلام علي ما عرف ان الحكم اذا ثبت بعلمة فما بقي شئ من العلمة يبقي ببقائه هكذا ذكر شيخ الاسلام ابو بكر ني شرح سير ا الا صل وذكر ني موضع اخرمنها ان دارالسلام لا تصير دارالحرب اذا بقي شئ من احكام الاسلام وان زال غلبته وذكرصدر الاسلام ابواليسر في سيرا الاصل ايضا ان دارالسلام لا تصير دارالحرب ما لم يبطل جميع ما به صارت دارالسلام كذا ذكره في باب احكام المرتدين وذكر شيخ الاسلام الا سبيجابي في مبسوطه ان دارالسلام محكومة بكونها دارالسلام فبقي هذا الحكم ببقاء حكم واحد فيها ولا تصير دارالحرب الا بعد ذوال القرائن كلها ودارالحرب تصير دارالسلام بذال بعض القرائن وهوا ان يجري فيها احكام الاسلام وذكر الامشي في واقعاته هكذا وذكر سيد الامام ناصر الدين في المنشور ان دارالسلام باجرا ء احكام الاسلام يتر حج كذا في الفصول العماديه وهكذا في الطحاوي والدر المختار وغير هما من كتب الفقه قال مولانا عبد العزيز دهلوي بعد نقل هذاه الروايات المذكورة في جواب المسائل المستفتي فعلم من هذه الروايات فقيت ان هذه البلاد لا تصير دارالحرب علي مذهب الامام الاعظم ابي حنيفه بل تكون دارالسلام كما كان ولا يجوز للمسلم اخذ الربوا من نصراني وغيره لان حرمته قطعية ثابتة باالاية بقوله تعالي وَأَحَلَّ ٱللَّهُ ٱلْبَيْعَ وَحَرَّمَ ٱلرِّبَو‌ٰا۟ ۚ وبقوله عليه الصلواة والسلام لعن رسول الله صلي الله عليه وسلم اكل الربوا وموكله كما هوا مذكور في كتب الاحاديث من الصحاح ستة وعلي مذهب صاحبه تصير دارالحرب اذا اجهي فيها احكامهم ففي اخذ الربوا من الحربي اختلاف فعند الامام شافعي و مالك و احمد و ابي يوسف لا يجوذ في دارالحرب ايضا وعند الامام الاعظم ابي حنيفة و امام محمد يجوذ في دارالحرب كما قال في الهدايه ولا ربوا بين المسلم والحربي في دارالحرب خلافا لابي يوسف وشافعي انتهي(ما نقل مولانا مرحوم مختصرا)

اور مولانا محمد اسحاق صاحب مرحوم مغفور نے بھی بیچ جواب مستفتی کے فرمایا ہے۔کہ سود لینا دارالحرب میں حربی سے درست نہیں۔چنانچہ عبارت فتویٰ جناب مولنا مبروری بعیہ نقل کی جاتی ہے۔درحل حرمت مبلغ سود دردارالحرب از حر بیان کلامے است وآں این است کہ حرمت  ربوا بنص قطعی ثابت است ۔کما قال اﷲ تعالیٰ

وَأَحَلَّ ٱللَّهُ ٱلْبَيْعَ وَحَرَّمَ ٱلرِّبَو‌ٰا۟ ۚ

 ۔وحلت ربوا از کافر حربی دردارالحرب ظنی است پس عمل کردن بردلیل اقوی اوکد است خصوصا وقتیکہ در دارالحرب بودن این دیارعلماء را اختلاف باشد بس اجتناب در گرفتن سود از حربی او کدوالزم خواہد بد و نیز قاعدہ فقہ است ۔اذا اجتمع الحلال والحرام غلب الحرام۔و این وقتے باشد کہ ہردودلیل عر یک رتبہ باشد وجوں یک کلیل کمبر باشدانہ از دلیل دیگر پسعمل برا قویٰ موکد ترمیشود بنا بریں قاعدہ ہم ربوا از حربی نبا ید گرفت و آئند از معاملہسود گرفتیناز حربی جہ جائے مسلم اجتناب یا ید نمود تمام شد عبارت تاویٰ جناب مولناٰ مرحوم۔واجب ہے مسلمانوں دیندار سعادت شعار پر کہ کہنے سے کسی نیم ملاں کے سود کے لینے دینے سے اگرچہ دارلحرب میں ہو پرہیز و اجتناب ضرور کریں۔اور مضامین ان آیتوں سے خوف و خطر میں رہیں۔چنانچہ اللہ تعالیٰ سود خواروں کے حق میں فرماتا ہے۔وما علینا الاالبلاغ واﷲ اعلم بالصواب ۔سورة محمد

نزیر حسین عفی عنہ۔سید محمد نزیر حسین۔سید محمد ہاشم۔صحیح محمد قطب الدین۔حسبنا اللہ لیس حفیظ اللہ۔ہذا لجواب فقیر محمد خواجہ ضیاء الدین احمد

)الجوب حق والمجیب محقق ۔محمد مسعود نقشبندی ۔محمد یوسف(

چونکہ دو سوال مرقوم است کہ سود فی زماننا اکثر اہل اسلام بدلیل اینکہ این ملک دارالحرب است ودر دارالحرب سود گرفتن درست است ہندو و سملمان باہم دیگرسود می گیرندومی دہند پس ازیں حیلہ سود گرفتن مسلمانان رادریںملک درست است یانہ۔

جواب۔این سوال صرف این قدر باید کہ ایں ملک دارالحرب نیست حسب روایات استنقادریں صورت سود گرفتن۔بالا تفاق درست نیست وسائل سوال از چین وروس کہ بالا تفاق دارالحرب ہسند نی کند ک در جواب نوشتہ شود گفتگو دریں مقدمہ بسیاراست در رکتب خمسہ امام محمد مرقوح است کہ طول بسیارمی خواہد پس جواب یہ این قدر ہست کہ این ملک دارالحرب نیست و دستخط ہم بریں است و بر دیگر روایات نیست کتبہ صدر الدین صدر الصدور سابق دہلی بقلم خاکسار محمد سبحان علی لکھنوی۔

نوٹ۔خلاصہ ان فتووں کا یہ ہے کہ سود لینا کسی بھی حال میں درست نہیں۔اور ہندوستان دارالحرب نہیں ہے۔

)فتاویٰ ثنائیہ جلد نمبر ٢۔١٤٣۔١٤٤(

 

فتاویٰ علمائے حدیث

جلد 14

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ