سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(04) زکوٰة اس مال (یعنی پونجی ) پر ہے یامنافغ پر الخ۔

  • 3061
  • تاریخ اشاعت : 2013-05-29
  • مشاہدات : 665

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

 زکوٰۃ راس المال یعنی پونجی پر ہے، یا منافع پر ہے مثلاً زید نے پانچ ہزار روپے سے تجارت شرع کی۔ ایک سال گزرنے پر اس کو ایک ہزار منافع ہوا اور دوسرے سال چھ ہزار سے تجارت کی تو سال گزرنے پر پھر ایک ہزار منافع ہوا تو پلے سال اور دوسرے سال کتنے روپے کی زکوٰہ ادا کرے، اسی صورت سے تیسرے سال سات ہزار سے تجارت شروع کی تو سال ختم ہونے پر اس کو کچھ فائدہ نہیں ہوا تو وہ زکوٰہ دے گا یا نہیں؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیلکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

 زکوٰۃ اصل مال پر ہے جس پر پورا سال گذرا ہو، صورت مرقومہ میں پہلے سال پانچ ہزار کی واجب ہو گی، اور دسرے سلا چھ ہزار کی۔ نفع بعد وصول آئندہ سال میں محسوب ہو گا۔ چونکہ زکوٰہ اصل مال پر از قسم عبادت ہے، اس لیے جس سال نفع نہیں ہوا۔ا س سال بھی زکوٰۃ واجب ہو گی۔ (اہل حدیث ۲۰رمضان ۱۳۵۰ھج) (فتاویٰ ثنائیہ جلد اول ص ۴۶۸)

فتاویٰ علمائے حدیث

جلد 7 ص 82

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ