سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(72) کیا مؤذن لمبی اذان کہہ سکتا ہے؟

  • 26127
  • تاریخ اشاعت : 2019-07-24
  • مشاہدات : 48

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا مؤذن لمبی اذان کہ سکتا ہے؟ (سائل: محمد ندیم عاصم چک ۴۔R؍58 تحصیل ہارون آباد)


السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا مؤذن لمبی اذان کہ سکتا ہے؟ (سائل: محمد ندیم عاصم چک ۴۔R؍58 تحصیل ہارون آباد)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

مناسب مقدار میں تکبیر کے مقابلہ میں لمبی اذان کہنے کی اجازت ہے مگر بے تحاشہ لمبی اذان بھی مناسب نہیں،اس سے اذان کا جواب دینے والے اکتا کر جواب دینا چھوڑ دیتے ہیں اور اذان کے ثواب سے محروم رہ جاتے ہیں، جس کی ذمہ داری ایسے متکلف مؤذن پر عائد ہوتی ہے جو بلا وجہ اذان پر پانچ سے دس منٹ تک لگا دیتے ہیں۔ دوسری بات کہ اذان کے کلمات کے حروف بدل جاتے ہیں جس کی وجہ سے الفاظ میں تحریف لفظی واقع ہو جاتی ہے جو کہ بجائے خود ایک خلاف شرح جسارت ہے۔ ہاں مناسب طوالت بلا شبہ جائز ہے۔ حدیث  میں ہے:

عَنْ جَابِرٍ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ لِبِلَالٍ: «يَا بِلَالُ، إِذَا أَذَّنْتَ فَتَرَسَّلْ فِي أَذَانِكَ، وَإِذَا أَقَمْتَ خافذ۔ (جامع الترمذی)

’’رسول اللہﷺ نے فرمایا: اے بلال جب تو اذان پڑھے تو ہر ایک کلمہ الگ الگ کہو اور آہستہ آہستہ کہو اور نماز کے لیے اقامت پڑھے تو جلدی جلدی پڑھو۔‘‘

مگر یہ حدیث ضعیف ہے، رَوَاہ الترمذی وقال لا نعرِفُہ إلا من حدیث عَبدالمُنعم وھو إسناد مجھول اور ایک دوسرا راوی عمروبن واقد بھی ضعیف ہے۔

قال الدارقطنی ھو متروك وقال ابن عدی یکتب حدیثه مع ضعف وله شاھد من حدیث أبی ھریرة عند أبی الشیخ ومن حدیث أبی بن کعب عند عبداللہ بن احمد وکلھا واھیة الا انه یقوبھا المعنی الذی شرح له الاذان فإنه نداء لغیر الحاضرین فلا بد من  تقدیر وقت یتسع للذاھب للصلوة ولھذا المعنی مال الحاکم إلی تصحیح الحدیث۔ (تنقیح الرواة شرح المشکوة: ج۱ص۱۱۴)

اس ضعیف حدیث کے دو شاہد بھی ہیں، مگر وہ بھی کمزور ہیں مگر جس مقصد کے لیے اذان کہی جاتی ہے وہ مقصد اس کو قوی بنا دیتا ہے، یعنی چونکہ اذان غیر حاضر نمازیوں کو نماز کے وقت کی اطلاع دینے کے لیے پڑھی جاتی ہے اورا سکے لیے اذان کے کلموں کو الگ الگ اور ٹھہر ٹھہر کر کہنا چاہیے تا کہ زیادہ سے زیادہ لوگوں کے کانوں میں سنائی دے جبکہ تکبیر (اقامت) مسجد میں موجود نمازیوں کو نماز کی جماعت کھڑی ہونے کے لیے پڑھی جاتی ہے، لہٰذا اس کولمبی کرنے کی ضرورت نہیں، تاہم طوالت مناسب ہونی چاہیے ورنہ ریا کاری اور کلمات اذان میں تحریف کا خدشہ ہے۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ محمدیہ

ج1ص317

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ