سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(296) امام متقی اور پرہیز گار ہو لیکن شدت بیماری کی وجہ سے ٹھیک طرح سجدہ اور تشہد بھی نہ کر سکے تو اس صورت میں اسے امام بنایا جا سکتا ہے یا نہیں؟

  • 2581
  • تاریخ اشاعت : 2013-02-23
  • مشاہدات : 1213

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

 کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ زید بیمار ہے اور معذور ہے نہ کھڑا ہو سکتا ہے اور نہ تشہد میں ٹھیک بیٹھ ہی سکتا ہے سجدہ بھی نہیں کر سکتا۔ کیا اس صورت میں زید کو امام بنایا جا سکتا ہے؟ اور زید کی اقتداء میں نماز درست ہو گی؟ یہ بات پیش نظر ہے کہ زید عالم ، متقی اور پرہیز گار ہے۔


 

الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

صورہ مسئولہ میں واضح ہو کہ اگر زید عالم و متقی ہے اور ہمیشہ سے کسی مسجد کا امام ہے تو وہ شرعاً بوجہ ضرورت کے امامت کرا سکتا ہے۔ ہاں اگر کوئی اور عالم اور متقی شخص جو صحیح و سالم تندرست ہو اور ارکان نماز کو پورے طور پر ادا کرسکتا ہو تو اس کو امام بنانا بہتر ہے۔ کیونکہ رکوع و سجود نماز کے ضروری رکن ہیں جب وہ ان سے قاصر ہے تو دوسرے عالم صحیح و سالم کے ہوتے ہوئے اس کو امام نہ بننا چاہیے۔ حدیث دارقطنی وغیرہ میں آیا ہے۔
»اِجْعَلُوْا اَئمتَکُمْ خِیَارَکُمْ »الحدیث
پس جہاں خریت نماز بذریعہ قرأت و تقویٰ ہوتی ہے وہاں خریت نماز بذریعہ ادائیگی ارکان نماز و تعدیل ارکان بھی ضروری ہے۔ اس لیے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے مرض الموت میں ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ کو اپنا نائب امام صلوٰۃ کر دیا تھا کیونکہ آپ بوجہ مرض کے امامت صلوٰۃ نہیں کرا سکتے تھے اور مریض شخص بوجہ مرض کے نہ تعدیل ارکان صلوٰۃ کر سکتا ہے اور نہ ارکان صلوٰۃ کو ادا کر سکتا ہے۔ چنانچہ زید مسئول تشہد اور سجدہ ہی نہیں کر سکتا تو وہ ایسی حالت میں ادائیگی فریضہ صلوٰۃ سے قاصر ہے اس کو اپنا نائب دوسرے صحیح و سالم شخص کو بنا لینا چاہیے۔ (از مولانا عبد الجبار کھنڈیلوی۔ الاعتصام جلد نمبر ۷ شمارہ نمبر ۴۳)

فتاویٰ علمائے حدیث

کتاب الصلاۃجلد 1 ص225
محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ