سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(69) کیا خواتین کے لیے ضروری ہے کہ بیت الخلاء جاتے ہوئے سَر ڈھانپ کر جائیں؟

  • 24079
  • تاریخ اشاعت : 2024-05-26
  • مشاہدات : 951

سوال

(69) کیا خواتین کے لیے ضروری ہے کہ بیت الخلاء جاتے ہوئے سَر ڈھانپ کر جائیں؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

خواتین جب لیٹرین جائیں تو کیا سَر ڈھانپ کر جانا ضروری ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

حدیث

«اَلمَرأَةُ عَورَةٌ‘(سنن الترمذی،،رقم:۱۱۷۳، باسناد صحیح،صحیح ابن خزیمه، بَابُ اخْتِیَارِ صَلَاةِ الْمَرْأَةِ فِی بَیْتِهَا عَلَی صَلَاتِهَا فِی الْمَسْجِدِ…الخ ،رقم:۱۶۸۵)

’’عورت پردہ ہے۔‘‘

کا تقاضا ہے کہ ہروقت حتی المقدور پردے کا اہتمام کیا جائے۔

فقیہ ابن قدامہ رحمہ اللہ   فرماتے ہیں: ’’قضائے حاجت کے آداب سے ہے کہ آدمی سَر ڈھانپ کر حاجت والی جگہ میں داخل ہو۔ یہ بات حضرت ابوبکررضی اللہ عنہ سے مروی ہے۔ دوسری وجہ یہ ہے کہ موجودہ حالت چونکہ سَتر کو کھولنے کی ہے۔ حیاء کا تقاضا ہے کہ سَر ڈھانپا ہو۔‘‘ المغنی:۱/۲۲۶

    ھذا ما عندي والله أعلم بالصواب

فتاویٰ حافظ ثناء اللہ مدنی

كتاب الطہارۃ:صفحہ:122

محدث فتویٰ

تبصرے