سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(33) بیع وفا رہن ہے بیع نہیں

  • 24000
  • تاریخ اشاعت : 2017-12-26
  • مشاہدات : 55

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
بیع وفا (یعنی بائع جب قیمت ادا کر دے مشتری وہ چیز واپس کر دے گا) کا عقد جائز ہے یا نہیں؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

بیع وفا (یعنی بائع جب قیمت ادا کر دے مشتری وہ چیز واپس کر دے گا) کا عقد جائز ہے یا نہیں؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اس مسئلہ میں اختلاف ہے درمختار اور عزر وغیرہ میں اس کی صورت اس طرح مذکور ہے کہ کسی چیز کو کسی شخص کے ہاتھ مثلا ایک ہزار درہم کے بیچ دیا اس شرط پر کہ جب وہ اس چیز کو واپس کر دے گا بائع اس کی رقم واپس کر دے گا۔ شافعیہ اس کو "رہن معاد" کہتے ہیں۔ مصر میں "بیع امانت" اور شام میں "بیع اطاعت" کہتے ہیں اور یہ بیع بعض کے نزدیک رہن ہے، اور اس صورت میں اس کے زوائد اور منافع بحکم حدیث " له غنمه و عليه غرمة " یعنی اس کے لئے اس کا منافع اور اس کے ذمہ اس کا نقصان ہو گا۔

اور جواہر الفتاویٰ میں ہے یہ قول صحیح ہے۔ اور فتاوی خیرالدین رملی میں ہے کہ: وعليه الاكثر یعنی اکثر علماء کا یہی قول ہے اور بعض کے نزدیک یہ بیع ہے رہن نہیں۔ اور مشائخ متقدمین و متاخرین کی ایک جماعت نے لوگوں کا اس ضرورت کی خاطر اور ربا سے محفوظ رہنے کے لئے اس قول کو اختیار کیا ہے لیکن اگر اسی عقد میں شرط استردار لگائی جائے تو بیع فاسد ہو جائے گی کیونکہ حدیث میں ہے "نهي عن بيع و شرط" یعنی آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے عقد بیع میں شرط لگانے جانے سے منع فرمایا ہے۔ اور شاہ عبدالعزیز رحمۃ اللہ علیہ نے ([1]) لکھا ہے کہ اگرچہ بعض فتاویٰ میں اسے جائز رکھا ہے، لیکن ہمارے نزدیک عدم جواز راجح ہے۔ اور حقیقت میں یہ عقد، عقد رہن ہے کہ جو اس شرط فاسد کے سبب فاسد ہو گئی ہے جو عقدِ بیع کے مخالف ہے۔


[1] فتاویٰ عزیزیہ/560 اردو میں

  ھذا ما عندی والله اعلم بالصواب

فتاویٰ نواب محمد صدیق حسن

صفحہ:348

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ

ABC