سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(5) ماں کی طرف سے حج کرنا

  • 21465
  • تاریخ اشاعت : 2017-07-13
  • مشاہدات : 176

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
اگر کسی نے اپنی ماں کی طرف سے حج کیا۔ میقات پر تلبیہ حج کہا، لیکن اپنی ماں کی طرف سے تلبیہ نہ کہا تو ایسے آدمی کے لیے کیا حکم ہے؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

اگر کسی نے اپنی ماں کی طرف سے حج کیا۔ میقات پر تلبیہ حج کہا، لیکن اپنی ماں کی طرف سے تلبیہ نہ کہا تو ایسے آدمی کے لیے کیا حکم ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اگر اس کی نیت ماں کی طرف سے حج کرنے کی تھی لیکن تلبیہ میں ذکر کرنا بھول گیا تو حج اس کی ماں کی طرف سے ہو گا۔ اس لیے کہ نیت( تلبیہ سے) زیادہ قوی ہے رسول اکرم  صلی اللہ علیہ وسلم  کا فرمان ہے:" اعمال کا دارو مدار نیتوں پر ہے"اس لیے اگر نیت دوسرے کی طرف سے حج کرنے کی تھی لیکن احرام کے وقت ذکر کرنا بھول گیا تو حج اسی کی طرف سے ہو گا جس کی طرف سے نیت کی تھی۔

ھذا ما عندی والله اعلم بالصواب

حج بیت اللہ اور عمرہ کے متعلق چنداہم فتاوی

صفحہ:16

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ