سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(677) بے شک اللہ تعالی تین کاموں کے وقت خاموشی پسند کرتا ہے.!

  • 2135
  • تاریخ اشاعت : 2012-09-16
  • مشاہدات : 839

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
«إِنَّ اﷲَ يُحِبُّ الصَّمْتَ عِنْدَ ثَلاَثٍ عِنْدَ تِلاَوَةِ الْقُرْآنِ وَعِنْدَ الزَّحْفِ وَعِنْدَ الْجَنَازَةِ»
بے شک اللہ  تعالیٰ تین کاموں کے وقت خاموشی پسند کرتا ہے تلاوت قرآن پاک اور لڑائی اور جنازہ کے وقت۔ تفسیر ابن کثیر جلد نمبر۲ بحوالہ طبرانی  زید بن ارقم راوی ہے اس کی وضاحت فرمائیں؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
«إِنَّ اﷲَ يُحِبُّ الصَّمْتَ عِنْدَ ثَلاَثٍ عِنْدَ تِلاَوَةِ الْقُرْآنِ وَعِنْدَ الزَّحْفِ وَعِنْدَ الْجَنَازَةِ»

بے شک اللہ  تعالیٰ تین کاموں کے وقت خاموشی پسند کرتا ہے تلاوت قرآن پاک اور لڑائی اور جنازہ کے وقت۔ تفسیر ابن کثیر جلد نمبر۲ بحوالہ طبرانی  زید بن ارقم راوی ہے اس کی وضاحت فرمائیں؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد! 

حافظ ابن کثیر نے:

﴿يَٰٓأَيُّهَا ٱلَّذِينَ ءَامَنُوٓاْ إِذَا لَقِيتُمۡ فِئَةٗ فَٱثۡبُتُواْ وَٱذۡكُرُواْ ٱللَّهَ كَثِيرٗا لَّعَلَّكُمۡ تُفۡلِحُونَ﴾--انفال 45

کی تفسیر ج۲ ص۳۱۶ میں لکھا ہے :

«وقال الحافظ ابو القاسم الطبرانی حدثنا ابراهيم بن هاشم البغوی حدثنا امية بن بسطام حدثنا معتمر بن سليمان حدثنا ثابت بن زيد عن رجل عن زيد بن ارقم عن النبیﷺمرفوعا قال : إن اﷲ يحب الصمت عند ثلاث»

 الحدیث  مگر اس کی سندضعیف ہے کیونکہ اس میں ایک راوی عن رجل مجہول ہے ۔

وباللہ التوفیق

احکام و مسائل

تفسیر کا بیان ج1ص 483

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ