سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(264) سورۃ یس کے فضائل

  • 21157
  • تاریخ اشاعت : 2017-06-17
  • مشاہدات : 150

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
جو شخص ہر صبح  سورت یسین  کی تلاوت کرتا ہے  تو اس دن  کی تمام حاجتیں  پوری ہوں گی ۔اس روایت  کی تحقیق مطلوب  ہے ( ملحضا از  مکتوب  حبیب اللہ پشاور)

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

جو شخص ہر صبح  سورت یسین  کی تلاوت کرتا ہے  تو اس دن  کی تمام حاجتیں  پوری ہوں گی ۔اس روایت  کی تحقیق مطلوب  ہے ( ملحضا از  مکتوب  حبیب اللہ پشاور)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

یہ روایت  سنن الدارمی  ( ج 2ص457 ح3421 وطبعۃ  محققہ  ح 3461) میں  " عطا ء بن  ابي رباح ( تابعي ) قال :ان رسول الله صلي الله عليه وسلم  قال" کی سند  سے موجود ہے  ،اور دارمی  ہی سے  صاحب  مشکوۃ نے (ح  21277بتحقیقی) نقل کی ہے۔

 یہ روایت مرسل  ہونے کی وجہ  ضعیف ہے اور  " بلغنی " کا نام  فاعل  نامعلوم  ہے ،

 سورہ یس کی فضیلت  میں درج  ذیل  مرفوع روایات بھی ضعیف ومردود ہیں:

1)ان  لكل  شئي قلبا  قلب  القرآن  يس  ومن قرا يس  كتب الله له بقراتها قراءة القرآن  عشر مرات"

( جامع ترمذی ح2887 من حدیث قتادۃ عن انس رضی اللہ عنہ وتبلیغی  نصاب  ص 292 فضائل  قرآن  ص58)

امام ترمذی  اس روایت  کے ایک راوی ہارون  ابو محمد کے بارے  میں فرماتے  ہیں" شیخ مجہول " لہذا یہ روایت  ہارون  مذکور کے مجہول  ہونے کی وجہ  سے  ضعیف  ہے۔  شیخ  البانی ؒ نے اسے  موضوع قراردیا ہے۔  (الضعیفۃ  ج 1ص202ح169)

امام ابو حاتم  الرازی  نے یہ دعوی  کیا ہے  کہ اس حدیث کا راوی: مقاتل  بن سلیمان (کذاب) ہے ( علل الحدیث ج2 ص 1652) جبکہ سنن ترمذی  وسنن  الدارمی (ج 2ص 456ح3419) تاریخ  بغداد (ج 4ص 167) میں مقاتل  بن حبان ( صدوق) ہے ۔واللہ اعلم

 درج  بالا روایت کا ترجمہ  جناب  زکریا صاحب تبلیغی دیوبندی  نے درج ذیل الفاظ میں لکھا ہے: ہر چیز کےلیے  ایک دل  ہوا کرتا ہے۔ قرآن  شریف  کا دل  سورہ یس ہے ۔ جو  شخص سورہ یس  پڑھتا ہے  حق تعالی شانہ  اس کے لیے دس  قرآنوں  کا ثواب  لکھتا  ہے "

2)اس  باب  میں سیدنا ابو بکر  الصدیق رضی اللہ عنہ  روایت  کے بارے میں  امام ترمذی  نے لکھا ہے  کہ " ولايصح من قبل  اسناده  ضعيف  " ترمذي :٢٢٨٨٧)

3) "ان لكل  شئي  قلبا  وقلب  القرآن  يس " ( کشف الاستار  عن زوائد  البزارج  3ص 87 ح 2304 من حدیث  عطا  عنن ابی ہریرۃ رضی اللہ عنہ  )

اس حدیث  کے بارے میں  شیخ البانی  ؒ فرماتے ہیں :

"وحميد  هذا مجهول   كما قال  الحافط في التقريب  وعبدالرحمن  في التقريب  وعبدالرحمن  بن الفضل  شيخ  البزار  لم اعرفه  "( الضعيفه  ج١ص ٢-٤)

 یعنی  اس کا(  بنیادی ) راوی حمید ( المکی مولیٰ  علقمۃ / تفسیر  ابن کثیر  3/ 570 مجہول  ہے ۔ جیساکہ  حافظ  (ابن حجر  ) نے  تقریب  التہذیب  میں  کہا ہے  اور بزار  کے استاد : عبدالرحمن  بن  الفضل  کو میں نہیں جانتا ۔

 معلوم ہوا  کہ  یہ روایت  دو راویوں کی جہالت  کی وجہ سے  ضعیف  ہے۔

4) " من قرا يس  في ليلة اصبح  مغفورا له۔۔۔الخ

(  مسند  ابی یعلی  ج11ص 93۔ 94 ح  6324 وغیرہ  من طریق ہشام  بن زیاد  عن الحسن  قال: سمعت  ابا ہریرۃ بہ)

 اس روایت کی سند  انقطاع  کی وجہ سے  ضعیف  ہے ۔ ہشام  بن زیاد  متروک  ہے (التقریب  ص 364 ت:7292 )

5)     من قرا يس  في ليلة ابتغاء وجه الله غفرله  في تلك  اليلة " ( الداري  ح ٣٤٢- وغيره)

اس روایت کی سند  انقطاع کی وجہ سے  ضعیف  ہے ، حسن  بصری  کی سیدنا  ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ  سے ملاقات    ثابت نہیں  ہے  دوسرے یہ کہ  وہ مدلس  ہیں اور عن سے روایت کر رہے ہیں ۔

6)     " من قرا يس  في ليلة ابتغاء  وجه الله  غفرله  " (صحيح ابن حبان  : موارد الظمان  ح  665 وغیرہ  عن الحسن  (البصری ) عن جندب  رضی اللہ عنہ بہ)

اس روایت  کی سند انقطاع کی وجہ سے  ضعیف  ہے ۔ابو حاتم  رازی  نے کہا  : لم يصح  للحسن  سماع من جندب  " (المراسيل  ص٤٢)  نیز  دیکھئے  حدیث  سابق: 5

7)     من قرا يس  انتغاء  وجه الله  تعاليٰ غفرله  ماتقدم  من ذنبه  فاقرؤوها عند  موتاكم  " ( البيهقي  في شعب  الايمان  ح  ٢٤٥٨ من حديث  معقل  بن يسار رضٰي الله عنه )

 اس کی سند  ایک مجہول  راوی: ابو عثمان  غیر  النہدی  اور اس  کے باپ  کی جہالت  کی وجہ سے  ضعیف  ہے ۔ یہ روایت  مختصرا مسند احمد  (5/ 26، 27) مستدرک الحاکم (1/ 565 ) صحیح  ابن  حبان  ( الاحسان  7/ 269 ح2991 ونسخہ  محققہ  ح: 3002) سنن ابی داود  (3121) اور سنن  ابن ماجہ  ( 1448) میں موجود  ہے ۔اس حدیث  کو امام  دارقطنی  نے ضعیف قراردیا ہے ۔ مسند احمد (4/ 105) میں  اس کاایک  ضعیف  شاہد بھی ہے ،

8َ) من قرا يس في ليلة  اصبح  مغفورا له" –( حلیۃ  الاولیاء  4/ 130 من حدیث  عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ )

اس کی سند ابو مریم  عبدالغفار بن القاسم  الکوفی  کی وجہ سے  موضوع ہے ۔ابو مریم  مذکور کذاب  اور وضاع تھا۔  دیکھئے  لسان المیزان  (ج  4ص 50۔51)

 9)من  قرا یس عدلت  له عشرين  حجة  ومن  كتبها ثم شربها ادخلت  جوفة الف  يقين  والف  رحمة ونزعت  منه  كل  غل  وداء "( حلیۃ  الاولیاء ج 7ص 136) من حدیث  الحارث  (الاعور) عن  علی بہ "

 یہ روایت  حارث  اعور کے شدید ضعف ( مع  تدلیس ابی اسحاق) کی وجہ سے  سخت  ضعیف  ہے۔

10) " لو  ددت  انها  في قلبه كل انسان  من امتي  يعني يس " (: البزار  کشف  الاستار  3/87ح 2305 من حدیثابن عباس)

اس کاراوی  ابراہیم بن الحکم  بن ابان ضعیف ہے ۔ (لتقریب  :166)

11) من قرا سورة يس وهو في سكرات  الموت  او قريب  عنده  جاءه  خازن  الجنة بشربة من شراب  الجنة فسقاها اياه  وهو علي  فراشه  فيشرب  فيموت  ريان  ويبعث ريان  ولايحتاج  الي حوض  من حياض الانبياء " ( الوسيط  للواحدي  ٣/٥-٩)

 یہ روایت موضوع  ہے ۔ یوسف  بن عطیہ الصفار  متروک تھا ۔ ( دیکھئے  تقریب التہذیب:7872)

 اور ہارون  بن کثیر  مجہول  ہے ۔ دیکھئے  لسان المیزان  (ج 6ص 218)

12) من قرا يس فكانما قرا القران  عشر مرات  "( شعب الايمان للبيهقي  ح 2459)س

 یہ روایت حسان بن عطیہ کی وجہ سے مرسل ہے۔

13) سوره يس  تدعي  في التوراة المنعمة۔۔۔الخ 

( شعب الایمان  ح 2465 للعقیلی  ج  2ص 143الامالی  للشجری ج 1ص 118 تاریخ  بغداد للخطیب  ج 2ص 387، 388 والموضوعات لابن  الجوزی  ص 347 ج1 تبلیغی نصاب  ص 292 فضائل القرآن  ص 58۔59)

 اس روایت  کی سند  موضوع  ہے  محمد  بن عبدالرحمن  بن ابی بکرالجدعانی  متروک الحدیث  ہے اور دوسرے  کئی راوی مجہول  ہیں امام  بیہقی  فرماتے ہیں  : " وهو منكر " امام عقیلی  نے بھی  اسے منکر قرار دیا  ہے ۔اس کی  ایک دوسری  سند  تاریخ  بغداد اور الموضوعات لابن لاجوزی  میں ہے ،اس کا راوی  محمد بن  عبد بن  عامر  السمر قندی  کذاب  اور چور تھا۔

14) "اني  فرضت  علي امتي  قراءة  يس  كل ليله فمن دام  علي قراءتها كل ليلة ثم  مات مات   شهيداً " (الامالي  للشجري ج١ص ١١٨)

 یہ روایت موضوع ہے  ۔اس کے کئی  راویوں مثلاً عمر بن سعد الوقاصی ،  ابو حمض بن عمر  بن حفص  اور ابو عامر بن  عبدالرحیم کی عدالت  نامعلوم  ہے ۔خلاصہ یہ ہے کہ  سورت  یسین  کی فضیلت  میں تمام مرفوعس روایات ومردود ہیں ۔

امام  دارمی  ؒ فرماتے ہیں  : "  حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ زُرَارَةَ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَهَّابِ، حَدَّثَنَا رَاشِدٌ أَبُو مُحَمَّدٍ الْحِمَّانِيُّ، عَنْ شَهْرِ بْنِ حَوْشَبٍ، قَالَ: قَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ: «مَنْ قَرَأَ يس حِينَ يُصْبِحُ، أُعْطِيَ يُسْرَ يَوْمِهِ حَتَّى يُمْسِيَ، وَمَنْ قَرَأَهَا فِي صَدْرِ لَيْلِهِ، أُعْطِيَ يُسْرَ لَيْلَتِهِ حَتَّى يُصْبِحَ

"ہمیں  عمر وبن زرارہ  نے حدیث  بیان کی ہے :ہمیں  عبدالوہاب  الثقفی  نے حدیث بیان کی : ہمیں راشد  ابو محمد الحمانی  نے حدیث  بیان  کی ، وہ  شہر بن  حوشب  سے بیان کرتے ہیں کہ  ( سیدنا) ابن عباس ( رضی اللہ عنہما ) نے فرمایا: جو شخص صبح کے وقت یسین  پڑھے  تو اسے  شام تک آسانی  عطا ہوگی ۔اور جو شخص رات کے وقت  یسین پڑھے  تو اسے صبح  تک آسانی  عطا  ہوگی  ( یعنی  اس کے دن  ورات  آرام  وراحت   سے گزریں  گے۔) ( سنن  الدارمی  1/ 457 ح 3422 دوسرا  نسخہ  :3462 وسندہ حسن )

 اس روایت  کے راویوں  کا مختصر تعارف  درج ذیل  ہے:

1)     عمروبن  زرارہ : ثقة  ثبت  ( تقریب التہذیب  :5032)
2)      عبدالوھاب  الثقفی  : ثقة تغير قبل موته  بثلاث  سنين  ( التقريب  :٤٢٦١) لكنه  ماضر تغيره  حديثه  فانه  ماحدث بحديث  في زمن التغير ّ ( میزان  الاعتدال  2/681)
3)راشد  بن نجیح  الحمانی  ( صدوق ربما  اخطا ( تقريب  التهذيب : ١٨٥٧)
وحسن  له  البوصيري  ( زوائد  ابن ماجه :٣٣٧١)

یہ حسن  الحدیث  راوی  تھے ۔

 4)شہر  بن حوشب  فیہ  راوی ہیں  جمہور محدثین  نے ان  کی توثیق کی ہے ۔ ( کما حققتہ  فی کتابی تخریج  النھایہ  فی الفتن  والملاحم  ص 119،120)

حاٖفظ ابن  کثیر  ان کی ایک روایت  کو حسن کہتے ہیں ( مسند  الفاروق ج 1ص 228)

 میری تحقیق میں یہ راوی  حسن الحدیث ہیں ۔واللہ اعلم 

خلاصہ  یہ کہ  سند  حسن لذاتہ  ہے۔ (الحدیث :17)

 نیز  دیکھئے  ما ہنامہ  شہادت  اسلام آباد ، جنوری  2003ء

ھذا ما عندی والله اعلم بالصواب

فتاوی علمیہ

جلد1۔كتاب الدعاء۔صفحہ493

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ