سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(593) جب عورت نے خاوند کو طلاق کے عوض ذمہ داریوں سے بری کردیا بعد میں براءت ساقط کرنے کے لیے اپنی بیوقوفی کا دعویٰ کیا

  • 19441
  • تاریخ اشاعت : 2017-03-25
  • مشاہدات : 210

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ایک خاوند نے اپنی بیوی سے کہا اگر تو مجھے میری ذمہ داروں سے سے بری کر دے تو میں تجھے طلاق دے دوں گا پس عورت نے اس کو بری کردیا۔ وہ عورت ایسی نہیں ہے کہ اس کو کم عقلی کی وجہ سے تصرف کرنے سے روکا گیا ہو نہ اس کا باپ ہے نہ بھائی پھر اس عورت نے دعویٰ کیا کہ وہ بیوقوف ہے تاکہ وہ اس براءت کو ساقط کر سکے کیا اس دعوے کے بعد براءت ساقط ہو جائے گی؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اس مسئلے میں سلف و خلف میں اختلاف کافی مشہور ہے۔

صرف اس کے دعوے سے براءت باطل نہیں ہو گی اگر وہ اپنی بے وقوفی پر کوئی دلیل پیش کردے اور وہ ایسی عورت نہیں ہے کہ اس کو کم عقلی کی وجہ سے تصرف سے روکاگیا ہو تو اس سے براءت ساقط نہیں ہو گی اگر وہ خود ہی تصرف کرنے والی ہو۔ واللہ اعلم۔(ابن تیمیہ رحمۃ اللہ علیہ  )

ھذا ما عندی والله اعلم بالصواب

عورتوں کےلیے صرف

صفحہ نمبر 527

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ