سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(269) عورت كا امامت کروانا

  • 17876
  • تاریخ اشاعت : 2017-01-29
  • مشاہدات : 186

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا عورت  کے لیے جائز ہے کہ وہ ایک دوسری عورت کی جماعت کرائے، تو اس صورت میں مقتدی عورت کہاں اور کیسے کھڑی ہو گی؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

عورت کے لیے جائز ہے کہ وہ عورتوں کی جماعت کرا سکتی ہے مگر امام خاتون ان کی صف کے درمیان کھڑی ہو گی اور اگر مقتدی عورت بھی ایک ہی ہے تو وہ اپنی امام کی داہنی جانب (اس کے ساتھ مل کر) کھڑی ہو گی۔

    ھذا ما عندي والله أعلم بالصواب

احکام و مسائل، خواتین کا انسائیکلوپیڈیا

صفحہ نمبر 243

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ