سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(370)علم غیب کا دعویٰ کرنا کفر ہے

  • 16846
  • تاریخ اشاعت : 2016-06-20
  • مشاہدات : 743

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ہمارے ہاں ایک عورت ہے جسے ’’غائبہ‘‘ کہتے ہیں‘ اگر اس کا یہ نام اس لئے رکھا گیا کہ علم غیب کادعویٰ رکھتی ہے‘ تو اس کے بارے میں کیا حکم ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!
﴿قُل لَّا يَعْلَمُ مَن فِي السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ الْغَيْبَ إِلَّا اللَّـهُ... ٦٥﴾...النمل

’’(اے پیغمبر!) فرمادیجئے اللہ کے سوا آسمانو ںاور زمین میں کوئی بھی غیب نہیں جانتا۔ ‘‘

اور اس کا نام بدل کر کوئی اچھا نام رکھ دینا چاہئے۔ مثلاً فاطمہ یا عائشہ وغیرہ تاکہ اس کا یہ مشہور نام ختم ہوجائے۔ جس سے علم غیب کا دعویٰ ظاہر ہوتا ہے۔ ا سکے ساتھ ساتھ اسے چاہئے کہ وہ اللہ کے سامنے خلوص دل سے توبہ کرے اور یہ وعدہ کرے کہ وہ آئندہ علم غیب کادعویٰ نہیں کرے گی اور اللہ کے حرام کئے ہوئے نجوم اور کہانت وغیرہ ایسے کاموں سے پرہیز کرے گی جو علم غیب کا دعویٰ کرنے والوں نے بنارکھے ہیں۔ اگر وہ توبہ نہ کرے تو ملک کے حکام سے شکایت کی جائے تاکہ اسے مناسب سزا دی جاسکے اور لوگوں کو اس کام سے اور اس کی تصدیق کرنے سے منع کیا جائے۔
ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ دارالسلام

ج 1

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ