سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(152)بنکوں کی ملازمت کا حکم

  • 16488
  • تاریخ اشاعت : 2016-06-15
  • مشاہدات : 481

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

میرا چچا زاد بھائی بنک الجزیرہ میں ملازم ہے۔ کیا اس کے لیے یہ ملازمت جائز ہے یا نہیں؟ ہمیں فتویٰ دیجئے، اللہ تعالیٰ آپ کو بہتر جزا دے… میں نے اپنے بھائیوں سے سنا ہے کہ بنک کی ملازمت جائز نہیں۔ (عمری ۔ع۔ ا۔ جدہ)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

سودی کاروبار کرنے والے بنکوں میں ملازمت کرنا جائز نہیں۔ کیونکہ یہ کام گناہ اور سرکشی کے کاموں میں تعاون ہوتا ہے، جبکہ اللہ سبحانہ و تعالیٰ فرماتے ہیں:

 ﴿وَتَعَاوَنُوا عَلَى الْبِرِّ وَالتَّقْوَىٰ ۖ وَلَا تَعَاوَنُوا عَلَى الْإِثْمِ وَالْعُدْوَانِ ۚ وَاتَّقُوا اللَّـهَ ۖإِنَّ اللَّـهَ شَدِيدُ الْعِقَابِ ﴿٢﴾...المائدة

’’اور نیکی اور پرہیزگاری کے کاموں میں ایک دوسرے کی مدد کیا کرو اور گناہ اور زیادتی کے کاموں میں نہ کیا کرو اور اللہ سے ڈرتے رہو۔ بے شک اللہ کا عذاب سخت ہے۔‘‘

اور یہ تو معلوم ہے کہ سود بہت بڑے بڑے گناہوں میں سے ے۔ لہٰذا ایسے لوگوں سے تعاون جائز نہیں… نیز رسول اللہﷺ کی صحیح احادیث سے ثابت ہے کہ ’’آپﷺ نے سود کھانے والے، کھلانے والے، اس کی تحریر لکھنے والے اور اس کے دونوں گواہوں سب پر لعنت فرمائی ہے۔ نیز فرمایا کہ یہ سب لو گ اس گناہ میں برابر کے شریک ہیں۔‘‘

اس حدیث کو مسلم نے اپنی صحیح میں نکالا۔

    ھذا ما عندي والله أعلم بالصواب

فتاویٰ دارالسلام

ج 1

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ