سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(348) کیا عورت آذان کہہ سکتی ہے۔؟کیا اس کی آواز بھی پردہ ہے؟

  • 16298
  • تاریخ اشاعت : 2024-04-20
  • مشاہدات : 832

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
کیا عورت کے لئے آذان کہنا جائز ہے؟کیا اس کی آواز کو پردہ شمار کیاجائے گا یا نہیں؟

الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اولا۔علماء کے صحیح قول کے مطابق عورت کے لئے آذان نہیں ہے۔کیونکہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ اور حضرات خلفاء راشدین رضوان اللہ عنہم اجمعین کے عہد میں کبھی کسی عورت نے اذان نہیں کہی تھی۔

ثانیاً!عورت کی آواز علی الاطلاق پرد ہ نہیں ہے۔کیونکہ عورتیںنبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں اپنی شکایتیں پیش کرتیں۔اسلامی احکام دریافت کرتیں خلفاء راشدین رضوان اللہ عنہم اجمعین اور ان کے بعد کے حکمرانوں سے بھی احکام ومسائل کے بارے میں گفتگو کرتیں۔اجنبی مردوں کو سلام کرتیں۔اوران کے سلام کا جواب بھی دیتی تھیں۔اور آئمہ اسلام میں سے کسی نے کبھی بھی اس سے منع نہیں کیا۔ہاں البتہ عورت کے لئے یہ جائز نہیں کہ وہ مردوں سے بات کرتےہوئے اپنے لہجے میں شیرینی اور حلاوت (مٹھاس) پیدا کرے۔کیونکہ اس سے مردفریفتہ ہوں گے۔اور یہ امر ان کے لئے باعث فتنہ ہوگا۔جیسا کہ ارشاد باری تعالیٰ ہے:

﴿ يـٰنِساءَ النَّبِىِّ لَستُنَّ كَأَحَدٍ مِنَ النِّساءِ إِنِ اتَّقَيتُنَّ فَلا تَخضَعنَ بِالقَولِ فَيَطمَعَ الَّذى فى قَلبِهِ مَرَضٌ وَقُلنَ قَولًا مَعروفًا ﴿٣٢﴾... سورة الاحزاب
‘‘اے پیغمبرکی بیویو!تم دوسری عورتوں کی طرح نہیں ہو،اگرتم پرہیز گاررہنا چاہتی ہو تو(کسی اجنبی شخص سے)نرم نرم باتیں نہ کروتاکہ وہ شخص جس کے دل میں کوئی مرض ہے کوئی امید (نہ)پیداکرلے اوردستورکے مطابق بات کیا کرو۔'' (فتویٰ کمیٹی)
ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ :جلد1

صفحہ نمبر 331

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ