سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(32)بنی آدم کا ناخن تراش کرنا

  • 15872
  • تاریخ اشاعت : 2016-05-05
  • مشاہدات : 193

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

بنی آدم کےناخن حضرت آدم علیہ السلام کی نشانیاں کہی جاتی ہیں۔اگریہ صحیح ہےتو ناخن ترشوا کران کانجاست میں پھنکنا جائز ہےیا نہیں ؟ اگر جائز ہےتوکیا یہ عمل بےحرمتی نہیں سمجھا جائے گا۔؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

نبی آدم کےناخن کا حضرت آدم علیہ السلام کی نشانیاں ہونے کےمتعلق کوئی ضعیف روایت بھی نظر سےنہیں گزری ۔البتہ ملا علی قاری حنفی نےمرفاۃ شرح مشکوۃ 5؍646 شرح حدیث ذکر ا ویس قرنی میں لکھا ہے: کما قیل ظفر آدم انه اثر من جلدہ السابق،، ظاہر ہےکہ یونہی ایک بات مشہور ہوگی ہےجس کی کوئی اصل نہیں ۔کیونکہ یہ کھلی ہوئی حقیقت ہےکہ سارے اعضاء حضرت آدم علیہ السلام کی نشایناں ہیں ۔پس اس بارے میں ناخن کی کوئی خصوصیت نہیں رہی۔

بہتریہ ہے کہ ناخن اوربال ترشوا کران کودفن کردیا جائے۔’’قال الحافظ في سؤالات ههنا عن أحمد ، قلت له : يأخذ من شعرة وأظفاره، أيدفنه أم يلقيه ؟ قال : يد فنه ، قلت : بلغك فيه شئي ؟ قال : كان  ابن عمر يد فيه ، وروي أن النبي  صلي الله عليه وسلم امر بد فن الشعر والأظفار ، وقال : لا يتعلب به سحرة ابن آدم ، قال الحافظ : وهذا الحديث أخرجه البيهقي من حديث وائل بن حجر نحوه ، وقد استحب أصحابنا دفنها ، لكونها أجزاء من الآدمي ، قال : والترمذي الحكيم من حديث عبدالله بن بسر رفعه : قصواظفار كم واد فنواقلادتكم ونقو ابراجمكم ، وفي سنده راو مجهول ،، ( تحفةالأحوزي 4/10 ).  (محدث دہلی)

ھذا ما عندي والله أعلم بالصواب

فتاویٰ شیخ الحدیث مبارکپوری

 

جلد نمبر 1

صفحہ نمبر 101

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ