سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(158)ہبہ کی ہوئی ملکیت واپس لینا

  • 14945
  • تاریخ اشاعت : 2024-04-15
  • مشاہدات : 1071

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیافرماتے ہیں علماء دین اس مسئلہ میں کہ احمدخان نے اپنے بیٹوں میں ملکیت ان کے ناموں پرکروادی ان میں سےایک لڑکانافرمان ہوگیااورساری ملکیت پرقبضہ کرناچاہتا ہےاوراحمدخان نے اپنے اس بیٹے کوہبہ کی ہوئی ملکیت بیٹے س واپس لیناچاہتاہےبتائیں کہ شریعت محمدی کے مطابق اس کاکیا حکم ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

معلوم ہوناچاہیےکہ والداپنے بیتے کودی ہوئی ملکیت واپس لےسکتاہے:

((عن ابن عباس وابن عمررضی االله عنه النبى صلى الله عليه وسلم قال لايحل  لرجل أن يعطى عطية أويهب هبة فيرفيهاإلاالوالدفى مايعطى ولده.)) أخرجه ابوداود’كتاب البيوع’بان الرجوع فى الهبة’رقم الحديث:٣٥٣٩.
‘‘ابن عباس اورابن عمررضی اللہ عنہ سےروایت ہے  کہ نبی کریمﷺنے فرمایا:کسی آدمی کے لیے جائز نہیں ہے کہ عطیہ تحفہ کرکےواپس لےمگروالداپنی اولادکودی ہوئی چیز واپس لےسکتا ہے۔’’
ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ راشدیہ

صفحہ نمبر 556

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ