سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(134)ٹوپی سر پر رکھنا

  • 14920
  • تاریخ اشاعت : 2016-03-30
  • مشاہدات : 695

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

انسان كوعام زندگی میں سرڈھانپ کررکھناچاہیےیاکھلا؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

میری یہ تحقیق ہےکہ احرام کی حالت کے علاوہ آپﷺاپناسرڈھانپاکرتےتھےلہذااگرچہ سرکھلارکھناجائز توہے اورکھلےسرنمازبھی جائز ہے لیکن تاہم سرڈھانپناافضل اورمستحب ہے باقی سرکس سےڈھانپاجائے؟تواس کےلیےاحادیث میں کالی پگڑی کاذکرآتا ہے۔اوراکثراوقات آپﷺکےسرمبارک پرعمامہ ہواکرتاتھاااورمنبروغیرہ پرعمامہ کے ساتھ ہونے کاتذکرہ احادیث میں موجودہے۔صحیح بخاری میں وضوکے وقت پگڑی پرمسح کاذکرآتاہے۔فتح مکہ کے وقت آپ کےسرمبارک پرکالی پگڑی تھی لیکن احادیث میں ٹوپیوں کابھی ذکرملتاہے۔رنگ کاتعین کرنابہت مشکل ہےلیکن ایک حدیث جوکہ  ابوالشیخ لائے ہیں اس میں ہے کہ:‘‘سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہافرماتی ہیں کہ آپﷺدوران سفرکانوں والی ٹوپی پہنتےتھےجب کہ دوران حضرشامی ٹوپی پہنتے تھے۔’’

اسی طرح صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین سے بھی روایات میں ٹوپیاں پہننے کےآثارملتے ہیں جن کی تفصیل کی یہاں پرگنجائش نہیں ہے۔

حاصل کلام:......پگڑی خواہ ٹوپی آپﷺاورآپ کے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین کی سنت ہےدونوں میں سےکسی پر بھی عمل کیا جاسکتا ہے یا کبھی اس پر اورکبھی اس پرعمل کیاجاسکتاہے۔
ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ راشدیہ

صفحہ نمبر 510

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ