سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(114)بدکردار شوہر یا پاک دامن عورت

  • 14900
  • تاریخ اشاعت : 2024-04-20
  • مشاہدات : 1409

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیافرماتے ہیں علماء دین اس مسئلہ کے بارے میں کہ مسمات حاجوبنت  دین محمد کا کہنا ہے کہ میراخاوندمجھے محمدصدیق مجھے زبردستی شراب پلاکربرے کام کے لیے غیروں کے پاس بھیجتاہےاگرمیں انکارکرتی ہوں توسزادےکربھیجتاہےاب میں ان باتوں کی وجہ  سےبیزارہوں اورنکاح ختم کرواناچاہتی ہوں کیا شریعت کے مطابق عورت طلاق لے سکتی ہے یا نہیں؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

معلوم ہوناچاہئے کہ اگرخاوند ایسابداخلاق ہے توعورت طلاق لے سکتی ہے جس طرح حدیث پاک میں ہے:

((عن سعيدبن المسيب رضى الله عنه فى الرجل لايجد ما ينفق على إمرأته قال يفرق بينهما.)) بحواله سنن سعيدبن منصور’جلد٢’صفحه٥٥.

اوردوسری حدیث میں ہے:

((لاضررولاضرار.)) ابن ماجه’كتاب الاحكام’باب من بنى فى حقه مايضربجاره’رقم الحديث :٢٣٤١.
اس سےثابت ہواکہ خاوندنقصان پہنچانے والانہ ہواگروہ نقصان پہنچانے والاہے یاغیرشرعی کام کرواتا ہے توان دونوں صورتوں میں خاوندبیوی کے درمیان جدائیگی کی جائےگی۔
ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ راشدیہ

صفحہ نمبر 458

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ