سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

خطیب حاضرین سے پوچھ گچھ کر سکتا ہے

  • 14582
  • تاریخ اشاعت : 2016-02-23
  • مشاہدات : 710

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ہم نے ’’ بلیدہ‘‘ شہر میں دیکھا کہ خطیب صاحب منبر پر خطبہ دیتے ہوئے سامعین سے کہتے تھے۔ وحدوااللہ اور مسلمان بلندآواز سے تہلیل وتکبر شروع کر دیتے ہیں کیا امام کو یہ حق حاصل ہے کہ سامعین سے اس طرح کہے’ اور کیا سامعین کو تہلیل وتکبر کہنا درست ہے؟ اور اس حدیث کا کیا مطلب ہے:’’ جب جمعہ کے دن امام خطبہ دے رہا ہو اور تم اپنے ساتھی سے کہو:’’ خاموش ہوجا‘‘ توتونے لغو کام کیا۔‘‘ امید ہے کہ جواب عنایت فرمائیں گے۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

۔          اگر امام وحدوااللہ کے لفظ سے یہ سمجھانا چاہتا ہے کہ اللہ تعالیٰ کو اس کی ربوبیت ، الوہیت اور اسماء وصفات میں وحدہ لاشریک ماننا ضروری ہے تاکہ سامعین یہ عقیدہ رکھیں ۔ اس لیے نہیں کہتا کہ وہ اسے بلند آواز سے تکبیروتہلیل کے ساتھ جواب دیں لیکن انہوں نے غلطی سے اس کے ارادہ کے خلاف یہ بات سمجھ لی اور بلند آواز سے یہ الفاظ کہہ کر جواب دیا تو اس میں امام کی غلطی نہیں ‘ البتہ سامعین نے اپنے فہم اور عمل میں غلطی کی ، لہٰذا امام کو چاہے کہ انہیں نصیحت کرے اور اپنی بات کا صحیح مفہوم واضح کرے تاکہ وہ لوگ دوبارہ یہ غلطی نہ کریں اور اگر وحدوااللہ سے اس کا مطلب یہ تھا کہ سامعین اسی وقت بلندآواز سے تکبیر وتہلیل کے ذریعے اس کا جواب دیں تو وہ غلطی پر ہے اور بدعت کا ارتکاب کر دہا رہے اور سامعین بھی غلطی پر ہیں اور بدعت کے مرتکب ہیں ۔ کیونکہ یہ طریقہ رسول اللہ ﷺ نے اپنے خطبات میں اختیار کیا ہے نہ خلفائے راشدین نے اور نہ ان کے سامعین نے یہ کام کیا ہے البتہ خطیب کے لیے یہ جائز ہے کہ مسجد میں موجود کسی شخص سے اس سے تعلق رکھنے والے کسی کام کے بار ے میں پوچھ لے۔ جس طرح نبیﷺ  نے کیا جب سلیک ﷜ مسجد میں داخل ہوئے اور آپﷺخطبہ ارشاد فرما رہے تھے۔ حضرت سیلک﷜ (خطبہ سننے کے لیے) بیٹھ گئے۔ اور نماز تحیتہ المسجد ادا نہ کی۔ تو نبیﷺ نے انہیں اٹھ کر دو رکعت نماز پڑھنے کا حکم دیا۔ 1

اسی طرح ایک بار ایک اعرابی نے خطبہ کے دوران قحط کی شکایت کی اور نبیﷺ سے دراخوست کی کہ بارش کے لیے دعا فرمائیں۔ رسول اللہ ﷺ نے اللہ تعالیٰ سے دعا کی اور بارش ہونے لگی۔ بارش مسلسل ہوتی رہی حتی کہ اس نے آئندہ جمعہ  کے خطبہ کے دوران نبیﷺ سے دراخواس کی کہ وہ بارش بند ہونے کی دعا فرمائیں ۔ نبیﷺ نے دعا فرمائی کہ بارش ان مقامات پر نازل ہو جہاں اس کا برسنا مفید ہے او رنقصان دہ نہیں۔2

اسی طرح کا ایک واقعہ حضرت عمر ﷜ اور حضرت عثمان﷜ کا ہے ۔ جب حضرت عثمان﷜ جمعہ میں تاخیر سے تشریف لائے تو حضرت عمر﷜ نے انہیں کہا: ’’ یہ (جمعہ کے لیے آنے کا ) کون ساوقت ہے ؟‘ـ‘ حضرت عثمان﷜ نے عرض کی : ’ میں توصر ف وضو کر کے اگیا ہوں (تاکہ مزید دیرنہ ہوجائے) ‘ـ‘ حضرت عمر﷜ نے کہا: ’’ صرف وضو؟ (غسل کرنا چاہے تھا)‘‘ 3

اور نبی ﷜ سے صحیح سند مروی ہے کہ آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا:

((مَنْ أَحّدَثَ فِی أَمْرِنَا هذا مَالَیْسَ مِنْه فَهوَ رَدٌّ))

’’ جس نے ہمارے دین میں وہ چیز ایجاد کی جو اس میں سے نہیں تو وہ ناقابل قبول ہے۔ ‘‘

اور فرمایا:

((مَنْ عَمِلَ عَمَلًا لَیْسْ عَلَیْه أَمْرُنَا فَھُوَرَدٌّ))

’’ جس نے کوئی ایسا عمل کیاجو ہمارے دین کے مطابق نہیں وہ مردود ہے۔‘‘

۲۔        آپ نے جو حدیث ذکر کی ہے اسے بخاری، مسلم ، اور سنن اربعہ کے مصنفین نے روایت کیا ہے۔4

اس کامطلب یہ ہے کہ جب امام جمعہ کا خطبہ دے رہا ہو ، اس وقت اگرآپ نے اپنے پاس بیٹھے ہوئے آدمی سے کوئی بات کی ہ، اگر چہ کوئی نصیحت کی بات ہو، کسی اچھی بات کی ترغیب ہو ، یا کسی غلط سے روکا ہو مثلا آپ کہیں ’’ خاموش ہو جاؤ اور خطبہ سنو‘‘ تو آپ نے ایک غلط کام کیا اور ایک نامناسب کے مرتکب ہوئے ا س موقع پر یوں کرنا چاہے کہ خطیب سے گزارش کی جائے کہ غلطی کرنیو الے کو نصیحت کریں تاکہ وہ غلط کام چھوڑ کر اچھے کام کی طرف متوجہ ہو جائے ۔ اس ممانعت میںیہ حکمت ہے کہ سامعین خطبہ کے دوران یکے بعد دیگرے باتیں کرنا شروع نہ کردیں۔ اس طرح شور ہوجائے گا۔ غلطی کرنے والے کو اشارہ کے ذریعے ا س کی غلطی سے منع کرنے میں کوئی حرج نہیں۔

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

1مسند احمد ج: ۳، ص: ۳۶۳۔ صحیح بخاری حدیث نمبر: ۹۳۰، ۹۳۱، ۱۱۶۶۔ صحیح مسلم حدیث نمبر:۸۷۵۔

2صحیح بخاری حدیث نمبر: ۹۳۳، ۱۰۱۳، ۱۰۱۵، صحیح مسلم حدیث نمبر: ۸۹۷۔ مسنداحمد ج: ۳، ص: ۱۰۴، ۱۸۷،۱۹۴، ۲۷۱، ۲۷۱۔

3مسند احمد ج: ۱، ص: ۱۵، ۴۲۔ صحیح بخاری حدیث نمبر: ۸۸۲۔ صحیح مسلم حدیث نمبر : ۸۴۵۔ یہ الفاظ صحیح مسلم کے ہیں۔

4 صحیح بخاری حدیث نمبر: ۳۹۴۔ صحیح مسلم حدیث نمبر: ۸۵۱۔ مسند احمد ج: ۲، ص: ۲۴۴، ۲۷۲،۳۸۳، ۳۹۲، ۴۸۵، ۵۱۸ ۵۳۲۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ دارالسلام

ج 1

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ