سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(194) مقطوع الیدین والرجلین کا حکم

  • 1392
  • تاریخ اشاعت : 2012-07-02
  • مشاہدات : 545

سوال


السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

مقطوع الیدین والرجلین و مجروح الوجہ کا کیا حکم ہے بلاو ضوء نماز پڑھے یا مسح یا تیمم کرے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد! 

مقطوع الیدین والرجلین بلا وضو نماز پڑھے کیونکہ جب اس کے اعضاء وضوء ہی نہیں تو اس پر وضو کرنا بھی فرض نہیں «لا یکلف الله نفسا الا وسعها الایة» ایسا شخص آیت وضو کا مخاطب ہی نہیں۔ آیت  قرآنی میں خطاب اسی کو ہے جس کےہاتھ پیر ہیں۔ ہاں جس طریق سے اس کی ضرورت کھانے پینے کی پوری ہوتی ہیں ویسے ہی اگر اس کوکوئی وضو ء کرا دے تو وضوء کرکے نماز پڑھے ورنہ جس طرح ہوسکے نماز ادا کرے۔الدین یسروما جعل علیکم فی الدین من حرج۔

وباللہ التوفیق

فتاویٰ اہلحدیث

وضو کا بیان، ج1ص277 

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ