سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(96) سیدنا معاویہ رضی اللہ عنہ کاتب الوحی صحابی ہیں

  • 13617
  • تاریخ اشاعت : 2014-11-30
  • مشاہدات : 710

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا سیدنا معاویہ بن ابی سفیان رضی اللہ عنہما کا کاتب الوحی ہونا ثابت ہے؟ صحیح حدیث سے جواب دیں۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

امام بیہقی رحمہ اللہ فرماتے ہیں:

’’اخبرناه ابو عبداللہ الحافظ: حدثنا علی بن حمشاد: حدثنا ھشام بن علی: حدثنا موسی بن اسماعیل: حدثنا ابو عوانة عن ابی حمزة قال: سمعت ابن عباس قال: کنت العب مع الغلمان فاذا رسول الله صلی الله علیه وسلم قدجاء فقلت: ماجاء الا الی فاختبات علی باب فجاء فحطانی حطاة فقال اذهب فادع لی معاویة، وکان یکتب الوحی‘‘ الخ (دلائل النبوۃ ج۶ ص۲۴۳)

اس حدیث کی سند صحیح ہے۔ ابوحمزہ القصاب عمران بن ابی عطاء الاسدی صحیح مسلم کے راوی اور جمہور محدثین کے نزدیک ثقہ و صدوق ہیں۔ (دیکھئے میری کتاب نور العینین طبع جدید ص۱۴۸)

اس روایت ’’وکان یکتب الوحی‘‘ اور آپ (سیدنا معاویہ رضی اللہ عنہ) وحی لکھتے تھے، سے سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کا کاتب وحی ہونا ثابت ہے۔ والحمدللہ

تنبیہ:

ابو حمزہ عن ابن عباس والی یہ روایت مختصراً صحیح مسلم (۲۶۰۴ و ترقیم دارالسلام: ۶۶۲۸) می بھی موجود ہے۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ علمیہ (توضیح الاحکام)

ج2ص260

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ