سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(30) ’’لا اعتکاف‘‘ والی روایت ضعیف ہے

  • 13551
  • تاریخ اشاعت : 2014-11-22
  • مشاہدات : 288

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
اعتکاف کے سلسلے میں آپ کی تحقیق کیا ہے؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

اعتکاف کے سلسلے میں آپ کی تحقیق کیا ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

امام ابو حاتم رازی نے ’’لا اعتکاف‘‘ والی روایت کے راوی امام سفیان بن عیینہ کی ایک حدیث کو اس وجہ سے ضعیف قرار دیا ہے کہ اس میں سفیان مذکور نے سماع کی تصریح نہیں کی۔ (علل الحدیث ج۱ ص۳۲ ح۶۰ و المخطوطہ ۱۸، و فوائد فی کتاب العلل بقلم المعلمی ص۲۹)

شیخ ناصر بن حمد الفہد نے لکھا ہے:

’’وهذا یفید ان ابن عیینة احیانا یدلس عن الضعفاء‘‘ اور یہ اس بات کا فائدہ دیتی ہے کہ ابن عیینہ بعض اوقات ضعیف راویوں سے تدلیس کرتے تھے۔

(منہج المتقدمین فی التدلیس ص۳۶)

سعودی عرب کے مشہرو شیخ عبداللہ بن عبدالرحمن السعد حفظہ اللہ نے اس کتاب کی تقریظ لکھی ہے۔ ان دو تازہ حوالوں سے بھی یہی ثابت ہا کہ ’’لا اعتکاف الا فی المساجد الثلاثة‘‘ (تین مسجدوں کے سوا اعتکاف نہیں ہے۔) والی حدیث ضعیف ہے۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ علمیہ (توضیح الاحکام)

ج2ص153

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ

ABC